تازہ ترین
  • بریکنگ :- کراچی: بلدیاتی قانون پر جماعت اسلامی اور سندھ حکومت کے مذاکرات کامیاب
  • بریکنگ :- سندھ حکومت اور جماعت اسلامی کےدرمیان تحریری معاہدہ
  • بریکنگ :- جماعت اسلامی کا دھرنا ختم کرنے کا اعلان،کارکنان گھروں کو روانہ
  • بریکنگ :- پیپلز پارٹی اور جماعت اسلامی میئر کراچی کو بااختیار بنانےپر متفق
  • بریکنگ :- آپ کو تاریخی جدوجہد کرنے پرمبارکباد پیش کرتا ہوں،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- آپ نے ساڑھے تین کروڑ عوام ہی نہیں پورے ملک کو حیران کردیا،حافظ نعیم
  • بریکنگ :- ہم استقامت کے ساتھ 29 دن دھرنے پر بیٹھے رہے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:سندھ حکومت اور جماعت اسلامی نے مل کر ایک مسودہ بنایا ہے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:2021 کا ترمیمی بل اب ختم ہو جائےگا،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- آج میڈیا کے سامنے وزیر بلدیات نے ہمارے مطالبات تسلیم کیے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- ہم اس معاہدے پر عمل بھی کروائیں گے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:صوبائی فنانس کمیشن کے قیام پر رضامندہیں،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- مئیر اور ٹاؤن چیئرمین کمیشن کے ممبر ہوں گے،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- سندھ حکومت تعلیمی ادارے اور اسپتال بلدیہ کو واپس کرنے پر تیار،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- آکٹرائے اور موٹر وہیکل ٹیکس میں سےبھی بلدیہ کراچی کو حصہ ملے گا،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- کراچی: مئیر کراچی واٹر بورڈ کے چیئرمین ہوں گے،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- بلدیہ کو خود مختار بنانے کیلئےمالی وسائل دینےپر سندھ حکومت تیار، ناصر حسین

فیٹف کی شرائط پاکستانی سیاسی منظرنامہ شفاف کرنے کا طریقہ ہے،وفاقی وزیر قانون فروغ نسیم

Published On 09 September,2020 11:15 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) وفاقی وزیر قانون فروغ نسیم نے کہا ہے کہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (فیٹف) کی شرائط پاکستانی سیاسی منظر نامہ شفاف کرنے کا طریقہ ہے۔ ان قوانین کی منظوری پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا۔

ان کا کہنا ہے کہ فیٹف شرائط پاکستانی معیشت کو دستاویزی کرنے کیلئے اہم ہیں۔ فیٹف کہتا ہے کہ جعلی بینک اکاؤنٹس اور منی لانڈرنگ نہیں ہو۔ اس کا مطالبہ ہے کہ جو جتنا کماتا ہے وہ ڈکلیئر بھی کرے۔ فیٹف کی چھتری تلے منی لانڈرنگ قانون پاکستان کیلئے بہتر ہے۔ اگر کوئی منی ٹریل نہ دے تو مطلب پیسے کا ذریعہ چھپایا گیا ہے۔

یہ باتیں انہوں نے دنیا نیوز کے پروگرام ‘’دنیا کامران خان کیساتھ’’ میں خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہیں۔ فروغ نسیم کا کہنا تھا کہ جعلی اکاؤنٹس کیس پر سابق چیف جسٹس ثاقب نثار قابل تعریف ہیں۔ سپریم کورٹ نے منی لانڈرنگ کی نیب سے انکوائری کروائی۔ سپریم کورٹ نے جے آئی ٹی بنوائی جس نے زبردست کام کیا۔ فرانزک تحقیقات میں ٹیکس، بینکنگ قوانین کو بھی دیکھا گیا۔

وفاقی وزیر قانون نے کہا کہ نیب کیسز میں سمجھوتہ ہوگا اور نہ کسی کے ساتھ زیادتی ہوگی۔ احتساب عدالتیں آزاد ہیں، نیب بھی آزاد ادارہ ہے۔ جعلی بینک اکاؤنٹس کے تمام حقائق دستاویزی ثبوت پر مبنی ہیں۔ دستاویزی شواہد کی بنا پر آصف زرداری کی بریت مسترد ہوئی۔ جس کسی کو آزاد ہونا ہے تو وہ عدالت سے رجوع کر سکتا ہے۔ منی لانڈرنگ کیس میں دستاویزی شواہد کو دبایا نہیں جا سکتا۔

ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ وزارت قانون نے 120 احتساب عدالتوں کا پروپوزل بنا لیا ہے، اس کیلئے مرحلہ وار آگے بڑھ رہے ہیں۔ گزشتہ ہفتے نیب عدالتوں کی تجویز وزیراعظم آفس بھیج دی گئی ہے۔

فروغ نسیم نے بتایا کہ وزیراعظم نے نیب عدالتوں کیلئے فنانس ڈویژن کو ہدایات دیدی ہیں۔ 2 سال میں ملک بھر میں 120 احتساب عدالتیں قائم ہوں گی جو 20 سال پرانے کیسز پر تیزی سے فیصلہ دیں گی۔ ان کا کہنا تھا کہ پہلے مرحلے میں 60 سے 70 احتساب عدالتیں قائم ہوں گی۔ کیسز کم ہو جانے پر ججز کو دیگر کورٹس منتقل کر دیں گے۔