تازہ ترین
  • بریکنگ :- وزیرداخلہ پنجاب کالیہ میں لڑکی سےاجتماعی زیادتی کےواقعےکانوٹس
  • بریکنگ :- وزیرداخلہ پنجاب نےڈی پی اولیہ سےواقعہ کی رپورٹ طلب کرلی
  • بریکنگ :- لاہور: ملزمان کو گرفتار کر کے قرار واقعی سزا دلوانے کی ہدایت

کوویڈ پازیٹو ہونے کے بعدوزیراعظم اور خاتون اول نے گھر پر قرنطینہ کر لیا

Published On 20 March,2021 02:28 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) کوویڈ پازیٹو ہونے کے بعد وزیراعظم اور خاتون اول نے گھر پر قرنطینہ کر لیا، عمران خان سرکاری امور گھر سے سر انجام دیں گے، ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاسوں میں شرکت کریں گے۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم کی طبیعت چند روز قبل ناساز ہوئی، عمران خان نے دو روز قبل وییکسین لگوائی تھی۔ ویکسین سے قبل ہی وزیراعظم کو انفیکشن ہو چکا تھا۔ عمران خان کو ہلکی کھانسی اور بخار کی علامات ہیں۔ وزیراعظم سرکاری امور گھر سے سر انجام دیں گے۔ عمران خان ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاسوں میں شرکت کریں گے۔

 معاون خصوصی شہباز گل نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے خود کو اپنی رہائشگاہ پر قرنطینہ کرلیا، ان کی علامات شدید نہیں ہیں، بہت ہلکی سی کھانسی اور ہلکا سا بخار ہے، اللہ ان کو جلد صحتیاب کرے، وزیراعظم کی صحت کے بارے آگاہ کرتے رہیں گے۔

وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا ہے کہ وزیراعظم کی طبیعت بہتر اور وہ ہشاش بشاش ہیں۔ وزیر اعظم سے ملاقات ہوئی ہے، ان کی صحت اچھی ہے اور انہيں کورونا کی معمولی نوعیت کی علامات ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ وزیراعظم کو فوری علاج کی ضرورت نہیں، وزیراعظم سے رابطے میں رہنے والے افراد سے رابطہ کررہے ہیں تاہم ان سے رابطے میں رہنے والوں سے قرنطینہ کرنے کی درخواست ہے۔

معاون خصوصی کا کہنا تھاکہ وزیراعظم نے 18 مارچ کوکورونا ویکسین لگوائی تھی، وزیر اعظم میں کورونا کی علامات ویکسین لگانے سے دو تین روز پہلے سے تھیں، ایسا لگتا ہے ویکسین لگنے سے پہلے ہی وزیراعظم کے جسم میں کورونا موجود تھا۔ کوئی بھی ویکسین فوری اثر نہیں دکھاتی، قوت مدافعت دو سے تین ہفتوں میں بنتی ہیں۔

 وفاقی وزیر فواد چودھری نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کے عوام اپنے محبوب لیڈر کی صحت کیلئے دعا گو ہیں خدا جلد صحت دے۔

 اسد عمر کا کہنا تھا کہ وزیراعظم خیریت سے ہیں، عمران خان کو ویکسین لگنے سے پہلے انفیکشن ہو چکا تھا، جمعے کے روز وزیراعظم نے کورونا صورتحال کے باعث جلسے منسوخ کیے تھے، 10 دن کے لگ بھگ قرنطنیہ کا عرصہ ہوتا ہے، وزیراعظم کو جس دن کورونا کی علامات ظاہر ہوئیں، اسی دن ان کو ویکسین لگائی گئی تھی۔

 وفاقی وزیر نے مزید کہا کہ کورونا کی تیسری لہر بنیادی طور پر برطانیہ سے آئے وائرس کے باعث ہے، یہ وائرس زیادہ آسانی سے پھیلتا ہے، اس قسم کا وائرس ایک شخص کو ہو تو پورے خاندان کو ہو جاتا ہے، پہلے سے متاثرہ شخص کو دوسری بار بھی کورونا ہوسکتا ہے، جنوبی افریقہ اور برازیل سے مسافروں کی آمد پر پابندی لگا رہے ہیں۔

وزیر داخلہ شیخ رشید نے وزیراعظم عمران خان کے لئے نیک خواہشات کا اظہار کیا اور ان کی جلد صحتیابی کے لئے دعا کی۔ انہوں نے کہا کہ اللہ وزیر اعظم عمران خان کو صحت کاملہ عطا فرمائے، پوری قوم کی دعائیں ان کے ساتھ ہیں، عمران خان جلد صحتیاب ہونگے۔