تازہ ترین
  • بریکنگ :- وزارت خزانہ کی ملکی معیشت پرآؤٹ لک رپورٹ جاری
  • بریکنگ :- اسلام آباد:نان ٹیکس آمدنی میں کمی ریکارڈکی گئی،وزرات خزانہ
  • بریکنگ :- درآمدات،محصولات،ترسیلات زر،برآمدات،بڑی صنعتوں کی پیداوارمیں اضافہ
  • بریکنگ :- رواں مالی سال اب تک ترسیلات زر 11.9فیصداضافےسے 10.6ارب ڈالرریکارڈ
  • بریکنگ :- ملکی برآمدات 32.2فیصداضافےسے 9.7ارب ڈالرکی سطح پرپہنچ گئیں
  • بریکنگ :- درآمدات 66.3فیصداضافےسے 23.5ارب ڈالرہوگئیں،وزارت خزانہ
  • بریکنگ :- رواں مالی سال کےپہلے 4ماہ میں تجارتی خسارہ 13.8 ارب ڈالرتک پہنچ گیا
  • بریکنگ :- کرنٹ اکاؤنٹ خسارےمیں 5.1 ارب ڈالرکااضافہ ریکارڈکیاگیا،وزارت خزانہ
  • بریکنگ :- کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ جی ڈی پی کا 4.7 فیصدریکارڈکیاگیا،وزارت خزانہ
  • بریکنگ :- براہ راست غیرملکی سرمایہ کاری 4فیصدکمی سے 662.1 ملین ڈالررہی
  • بریکنگ :- زرمبادلہ ذخائر 23نومبرتک 22ارب 98 کروڑڈالرسےزائدہوگئے،رپورٹ
  • بریکنگ :- 4 ماہ میں ٹیکس ریونیو 36.8فیصداضافےسے 1843ارب روپےرہا،رپورٹ
  • بریکنگ :- 4 ماہ میں پی ایس ڈی پی کی مدمیں 392.7ارب روپےمنظورکیےگئے
  • بریکنگ :- 3 ستمبرتک مالیاتی خسارہ بڑھ کر 438ارب روپےتک پہنچ گیا،رپورٹ
  • بریکنگ :- زرعی قرضے 6.5فیصداضافےسے 381.3ارب روپےکی سطح پررہے
  • بریکنگ :- اکتوبرمیں مہنگائی کی ماہانہ شرح 9.2فیصدریکارڈکی گئی،رپورٹ
  • بریکنگ :- جولائی تااکتوبرمہنگائی کی سالانہ شرح 8.7 فیصدریکارڈ،رپورٹ
  • بریکنگ :- جولائی تاستمبربڑی صنعتوں کی شرح نمومیں 5.2 فیصداضافہ ہوا،رپورٹ

‏پاکستان کا افغانستان امن عمل دوبارہ منظم کرنے کی کوششوں کا خیر مقدم

Published On 24 March,2021 05:14 pm

اسلام آباد: (دنیا نہوز) پاکستان نے افغانستان میں امن عمل کو دوبارہ منظم کرنے کی کوششوں کا خیر مقدم کیا ہے۔

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں جمع کرائے گئے ایک بیان میں عالمی ادارے میں پاکستان کے مستقل مندوب منیر اکرم نے امن مذاکرات میں رکاوٹ ڈالنے والوں کی کوششوں اور جنگ سے تباہ حال ملک میں سیاسی مفاہمت روکنے سے خبردار کیا ہے ۔

پاکستانی مندوب نے تمام فریقوں پر زور دیاکہ وہ تشدد میں کمی کے لئے کام کریں کیونکہ اس سے افغانستان کے اندر اور باہر امن عمل میں رکاوٹ ڈالنے والوں کے ہاتھ مضبوط ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں انسانی حقوق اور جمہوریت کے تحفظ کے تناظر میں امن معاہدے کو ناکام بنانے اور افغان سرزمین کو اس کے ہمسائیوں کے خلاف استعمال کرنے کے خواہاں عناصر کا راستہ روکنا چاہیے۔

پاکستانی مندوب نے کہا کہ دہشت گردی نے افغانستان اور اس کے ہمسایہ ممالک پر تباہ کن اثرات مرتب کیے ہیں۔ پاکستان بین الاقوامی برادری کے اس عزم سے اتفاق کرتا ہے کہ وہ القاعدہ ، داعش یا دیگر عسکریت پسند گروہوں کو افغان سرزمین کو کسی بھی ملک کو دھمکی دینے یا حملہ کرنے کے لئے استعمال کرنے کی اجازت نہیں دے گا۔

انہوں نے واضح طور پر بھارت کو ذہن میں رکھتے ہوئے کہا کہ جو لوگ آج دہشت گردی پر واویلاکر رہے ہیں وہی لوگ افغانستان میں دہشت گردی کو جاری رکھنا چاہتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ یہ بات افسوس ناک ہے کہ سلامتی کونسل کو دہشت گردی کی معاونت کرنے والوں سے متعلق ثبوتوں کو زیر غور لانے سے روک دیا گیا۔ پاکستانی مندوب نے کہا کہ امن عمل کو یقینی بنانے کے لیے متعدد چیلنجز اور متواتر ناکامیوں کے باوجود افغان فریقین کو جہاں سیاسی تصفیہ کے حصول کی ممکنہ کوششیں کرنا ہوں گی وہیں امن عمل کے مخالفین کو مذاکرات کی میز پر لانے سے پیشگی سیاسی تصفیہ کے امکانات کم ہو جائیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان نے افغانستان میں امن عمل کی کوششوں کے تحت گذشتہ سال امریکا اور طالبان کے درمیان امن معاہدے کے آغاز اور اسے پایہ تکمیل تک پہنچانے اور اس کےبعد انٹرا افغان مذاکرات کے لیے سہولت کاری کی اور اس سلسلے میں پاکستان افغانستان میں کسی بھی جامع سیاسی تصفیہ کے لیے افغان راہنمائوں اور طالبان کے درمیان اتفاق رائے کی حمایت کرے گا ۔ پاکستانی مندوب نے کہا کہ افغان شہریوں کو کسی بھی بیرونی مداخلت کے بغیر اپنی منزل کا تعین کرنے اور اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنا چاہیے۔