تازہ ترین
  • بریکنگ :- آرمی چیف جنرل قمرجاویدباجوہ کا بہاولپورکادورہ ، آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- آرمی چیف نےخیرپورٹامیوالی اوراسرانی میں تربیتی مشقوں کاجائزہ لیا
  • بریکنگ :- آرمی چیف نےمیکنائزڈدستوں کی جنگی مشقوں کامشاہدہ کیا،آئی ایس پی آر

احساس ایجوکیشن پروگرام کے تحت سکینڈری تعلیم کیلئے وظائف کی منظوری

Published On 17 June,2021 06:28 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) احساس ایجوکیشن سی سی ٹی اسٹیئرنگ کمیٹی کی جانب سے سکینڈری تعلیم کیلئے وظائف کی منظوری، پروگرام میں تمام 154اضلاع میں سکینڈری سکول جانے والے مستحق بچوں کو شامل کیا جائے گا۔

ڈاکٹر ثانیہ نشتر کی زیر صدارت احساس ایجوکیشن مشروط مالی معاونت پروگرام (سی سی ٹی )کی اسٹیئرنگ کمیٹی کا اجلاس منعقد ہوا۔ سٹیئرنگ کمیٹی کو پرائمری ایجوکیشن سی سی ٹی پروگرام وسیلہ تعلیم ڈیجیٹل سے سکینڈری سطح تک بڑھانے کے حوالے سے بریفنگ دی گئی۔

یہ پروگرام آئندہ مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں ملک کے تمام اضلاع میں شروع کئے جانے کیلئے تیار ہے۔ چاروں صوبوں بشمول جی بی اور اے جے کے نمائندگان نے سکینڈری تعلیم کیلئے وظیفے کو بڑھانے کے حوالے سے اجلاس میں شرکت کی ۔

اس بات کی پوری طرح سے توثیق کی گئی کہ احساس پروگرام کے تحت سکینڈری تعلیم سی سی ٹی کے آغاز سے سکول حاضری میں اضافے، سکول نہ جانے والے بچوں بالخصوص لڑکیوں کے سکول میں اندراج سے ثانوی تعلیم کے مواقع میں تفاوت میں کمی رونما ہوگی ۔ڈاکٹر ثانیہ نشتر نے کہا کہ سکینڈری ایجوکیشن سی سی ٹی غریب خاندانوں کو سکینڈری تعلیم کے حصول کیلئے درپیش مالی مشکلات پر قابو پانے میں مدد دے گی ۔

سکینڈری سطح کے سی سی ٹی پروگرام کا اہتمام احساس وظیفہ پالیسی کے مطابق کیا جارہا ہے جو لڑکوں کے نسبت لڑکیوں کیلئے زیادہ وظیفے کی رقم فراہم کرتا ہے ۔وقت کے ساتھ ساتھ تعلیمی اخراجات میں اضافہ ہوتا جارہا ہے اور 10سال کی عمر کے بچے کے اخراجات میں مزید اضافہ ہوجاتا ہے ۔ دیہی علاقوں میں پانچویں جماعت کے بعد سے بچوں میں سکول نہ جانے کا رجحان بڑھتا ہے اور شہری علاقوں میں مختلف وجوہات کی بنا پر یہ رجحان دسویں جماعت کے بعد دیکھنے میں آتا ہے ۔

سکینڈری تعلیم کے وظائف سے والدین کو اپنی بیٹیوں کو سکینڈری سکول بھیجنے اور اعلی تعلیم کے حصول کیلئے ان کی مدد کے حوالے سے حوصلہ افزائی ہوگی ۔ اس پروگرام میں پاکستان کے تمام 154اضلاع میں سکینڈری سکول جانے والے مستحق بچوں کو شامل کیا جائےگا ۔

یہ کمیٹی تخفیف غربت وسماجی تحفظ ڈویژن، وزارت تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت، غیر ملکی دولت مشترکہ اور ترقیاتی دفتر، عالمی بینک، ایشیائی ترقیاتی بینک، اے جے کے اور جی بی سمیت تمام صوبوں کے محکمہ تعلیم سے تعلق رکھنے والے ممبران اور وسیلہ تعلیم ڈیجیٹل آپریشنز ٹیم پر مشتمل تھی ۔