تازہ ترین
  • بریکنگ :- کندھ کوٹ:جے یو آئی (ف) اور پیپلزپارٹی کےکارکنوں میں جھگڑا
  • بریکنگ :- کندھ کوٹ:تصادم کاواقعہ میونسپل کمیٹی وارڈنمبر 10 میں پیش آیا
  • بریکنگ :- کندھ کوٹ:ڈنڈےلگنےسے 30 کارکن زخمی،متعددگاڑیوں کونقصان
  • بریکنگ :- کندھ کوٹ:پولیس کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی
  • بریکنگ :- نواب شاہ:پولنگ اسٹیشن نادرشاہ ڈسپنسری میں ہنگامہ آرائی
  • بریکنگ :- بیلٹ پیپرمیں ایک سیاسی جماعت کانشان نہیں ہے،مظاہرین
  • بریکنگ :- نواب شاہ: ہنگامہ آرائی کے باعث پولنگ روک دی گئی
  • بریکنگ :- نواب شاہ: پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری تعینات

وزیراعظم کا مینار پاکستان پر لڑکی کو ہراساں کرنے کے واقعے کا نوٹس

Published On 18 August,2021 02:14 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) وزیراعظم نے مینار پاکستان واقعے کا نوٹس لے لیا، آئی جی پنجاب انعام غنی نے عمران خان کو تفصیلات سے آگاہ کیا۔ زلفی بخاری نے ٹویٹ میں کہا کہ حکومت ملوث افراد کو کسی صورت نہیں چھوڑے گی۔

لاہور میں خاتون ٹک ٹاکر سے بدتمیزی، دست درازی اور ہراساں کرنے کا وزیراعظم نے سخت نوٹس لیا ہے۔ انہوں نے آئی جی پنجاب سے رابطہ کیا، انعام غنی نے عمران خان کو واقعے سے تفصیلی طور پر آگاہ کیا اور اب تک کی تفتیش سے متعلق بریف کیا۔ زلفی بخاری نے ٹویٹر پیغام میں کہا کہ پولیس واقعے میں ملوث ملزمان کی گرفتاری کیلئے کارروائی کر رہی ہے۔ انہوں نے رنجیت سنگھ کے مجسمے کو نقصان پہنچانے والے واقعے کی جانب بھی اشارہ کیا کہ ان جرائم میں ملوث افراد کو کسی بھی صورت چھوڑا نہیں جا سکتا۔

یاد رہے کہ یوم آزادی پر مینار پاکستان گراؤنڈ میں عوام کے جم غفیر نے ٹک ٹاکر لڑکی کو زدوکوب کیا۔ ہجوم نے کھینچا تانی کی حد کر دی، خاتون کےکپڑے تک پھٹ گئے۔ ٹک ٹاکر کے ساتھ آئے اس کے 6 ساتھی بھی حملے سے نہ بچ پائے اور موبائل، نقدی اور طلائی زیورات سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ معاملے کا وزیراعلیٰ پنجاب نے فوری نوٹس لیا تھا اور 400 افراد کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا تھا۔

ینار پاکستان پر خاتون کو سینکڑوں افراد کی جانب سے ہراساں کیے جانے کی ویڈیو منظر عام پر آئی ہے جس کے بعد ملک بھر میں غم و غصے کا اظہار کیا جا رہا ہے۔ اس دوران خاتون نے اپنی دکھ بھری داستان دنیا کو سنا دی ۔

ایک انٹرویو کے دوران سوشل میڈیا سے شہرت پانے والی عائشہ اکرم کا کہنا تھا کہ میں نے آج تک کوئی فحش ویڈیو نہیں بنائی، فحش کپڑے نہیں پہنے، واقعے والے روز میں نے مکمل کپڑے پہنے ہوئے تھے۔ میرے کچھ کہنے سے پہلے میرا سب کچھ اُتار دیا گیا۔

اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مجھے جنگلے اور تاروں والی جگہ پر سکیورٹی گارڈ نے رکھا تھا تاہم شہریوں کے بڑے ہجو م نے تاریں اور جنگلے توڑدیئے اور اندر گھس گئے، اس دوران میرے پاس ایک ایسی آپشن بھی آئی کہ مینار پاکستان میں موجود پانی والے تالاب میں کود جاؤں، میری ٹیم نے بھی کہا تھا کہ آپ بچ جائیں گی، میں اس لیے نہیں کودی کیونکہ وہاں پانی بہت گہرا تھا۔

خاتون کا مزید کہنا تھا کہ میں نے اور میری ٹیم نے 15 پر پولیس کو کال بھی کی، پولیس کو 2 بار کال کی گئی تھی، تاہم مجھے کوئی ریسپانس نہیں ملا، میں ساڑھے 6 بجے سے لیکر 9 بجے تک ٹارچر ہوتی رہی، لوگ میرے بالوں کو کھینچتے تھے اور لوگ کہتے تھے اُٹھو ناٹک مت کرو۔

عائشہ اکرم کا کہنا تھا کہ واقعہ میں ملوث لوگوں کی مجھے شکلیں یاد ہیں، میں پہچان سکتی ہوں، وہاں پر 3 سے 4 ہزار لوگ موجود تھے، ایسے لگا ساری دنیا میرے پاس آ گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایک عورت پاکستان اور شہر میں محفوظ نہیں ہے تو وہ دنیا کے کسی بھی کونے میں محفوظ نہیں ہے، مانتی ہوں کہ میں وہاں گئی ہوں، میرے دل چاہ رہا تھا کہ میں وہاں جاؤں کیونکہ میں یوٹیوبر ہوں، میں کام کے لیے گئی تھی لیکن کسی کا حق نہیں تھا مجھے مکمل طور پر برہنہ کرے۔ جب ایک عورت کو سر عام برہنہ کیا جاتا ہے تو اس کے پاس کچھ بھی نہیں بچتا۔ کیا پاکستان کی بیٹی ہونے کی یہ سزا ہے، میں وہاں فحاشی والے کپڑے نہیں پہن کر گئی تھی، میں نے آج تک کوئی فحاش ویڈیو نہیں بنائی۔

ان کا کہنا تھا کہ میں دنیا کے سامنے اگر بول رہی ہوں تو اپنے لیے نہیں بول رہی، میرے ساتھ جو ہونا تھا ہو گیا، چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس گلزار احمد خان اور وزیراعظم عمران خان سے اپیل ہے کہ کچھ ایسا کیا جائے چھوٹی چھوٹی بچیوں کے ساتھ ریپ کیا جاتا ہے ایسا واقعات نہ ہوں، میرا مطالبہ ہے اقبال پارک کو 14 اگست کو بند کیا جائے یا کچھ ایسا ہو کہ فیملی کے بغیر انٹری بالکل نہ ہو، آج اگر میرے ساتھ ہوا ہے تو کل کسی اور کے ساتھ بھی ہو سکتا ہے۔

عائشہ اکرم کا کہنا تھا کہ مجھے کچھ بھی سمجھ نہیں آ رہا تھا لوگ مجھ پر تشدد کیوں کر رہے تھے میرے ساتھ کھیل رہے تھے، میرے جسم پر ایسا کوئی نشان نہیں ہے جہاں پر کوئی نشان نہ ہو لیکن میرے ساتھ ایسا کیوں ہوا، میں نے کسی کا کچھ نہیں بگاڑا تھا لوگ جانتے بھی نہیں تھے جو لوگ مجھے بچا رہے تھے وہی لوگ مجھے اچھال رہے تھے، ایک کپڑے اُتارتا تھا تو دوسرا کھینچنے کی کوشش کرتا تھا۔

اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ جب میں ہمت ہار گئی تھی کیونکہ میرا سانس بہت تنگ ہو رہا تھا تو اس وقت ایک بچہ آیا اس نے میرے منہ پر پانی ڈالنے کی کوشش کی لیکن میرے منہ میں پانی نہیں گیا، اسی دوران بچہ زور زور سے چیخ کر سب کو کہہ رہا تھا کہ تم لوگ پاگل ہو۔ یہ لڑکی بہت ختم ہو گئی ہے۔