تازہ ترین
  • بریکنگ :- کراچی کےمسائل حل کرنےکی کوشش کررہےہیں،اسدعمر
  • بریکنگ :- تاجروں سےحاصل ہونیوالےٹیکس سےملک کانظام چلتاہے،اسدعمر
  • بریکنگ :- وفاقی حکومت نےکراچی کوگرین لائن بس سروس دی،اسدعمر
  • بریکنگ :- کراچی سرکلرریلوےکامنصوبہ بھی وفاقی حکومت بنائی گی،اسدعمر
  • بریکنگ :- صوبےپروہ حکومت مسلط ہےجوکوئی کام نہیں کررہی،اسدعمر

’’سو رہا روگ‘‘ خوفناک بیماری، لاکھوں افراد کو موت کی نیند سلا دیا

Published On 26 October,2021 09:50 am

لاہور:(روزنامہ دنیا ) ویسے تو اکثر بیماریاں ایسی ہوتی ہیں جو کسی وبا کی شکل اختیار نہیں کرپاتیں مگر کسی شکل میں نظر آتی رہتی ہیں،"اسی طرح سو رہا روگ " یا" سلیپنگ سکنس " نامی بیماری اچانک نمودار ہوئی اور لاکھوں انسانوں کو موت کی نیند سلا دیا۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق سو سال قبل ایک ایسی بیماری دنیا میں نمودار ہوئی تھی جو کسی ہارر فلم کی کہانی کا حصہ لگتی ہے کیونکہ 10برس تک دنیا کے مختلف حصوں میں پہنچ کر وہ اچانک غائب ہوئی اور آج تک معلوم نہیں ہوسکا کہ اس کی وجہ کیا تھی۔اس بیماری کے شکار کسی بت کی طرح ہوجاتے تھے اور ان کے جسم ذہن کے قیدی بن جاتے تھے ۔

سلیپنگ سکنس نامی بیماری کا شکارہوکر لاکھوں افراد ہلاک ہوئے اور متعدد زندہ مجسمے میں تبدیل ہوگئے اور اپنی زندگیاں ساکت اور خاموش رہ کر گزار دیں، یہ وہ معمہ جو دہائیوں تک طبی ماہرین کے ذہن چکراتا رہا۔ ایک صدی بعد انسان کو مجسمہ بنادینے والے اس وائرس کو تاریخ کے چند بڑے طبی اسرار میں سے ایک مانا جاتا ہے ۔