تازہ ترین
  • بریکنگ :- سانحہ مری ،متعلقہ محکموں کی غفلت ثابت
  • بریکنگ :- افسران واٹس ایپ پرچلتے رہے،تحقیقات میں انکشاف
  • بریکنگ :- افسران صورتحال کو سمجھ نہیں سکے ،رپورٹ
  • بریکنگ :- افسران نےصورتحال کوسنجیدہ لیانہ کسی پلان پرعمل کیا ،رپورٹ
  • بریکنگ :- متعددافسران نے واٹس ایپ میسج تاخیر سے دیکھے ،رپورٹ
  • بریکنگ :- کمشنر، ڈی سی ،اے سی نےغفلت کا مظاہرہ کیا،رپورٹ
  • بریکنگ :- سی پی او،سی ٹی اوذمہ داریاں پوری کرنےمیں ناکام رہے،رپورٹ
  • بریکنگ :- محکمہ جنگلات اور ریسکیو 1122کا مقامی آفس بھی کچھ نہ کرسکا
  • بریکنگ :- محکمہ ہائی وے بھی ذمہ داری پوری کرنے میں ناکام رہا،رپورٹ
  • بریکنگ :- سانحہ مری کی رپورٹ 27 صفحات پر مشتمل ہے
  • بریکنگ :- 4 والیم پرمشتمل افسران اورمقامی لوگوں کے بیانات لیے گئے
  • بریکنگ :- تحقیقاتی کمیٹی کی مری میں محکمہ موسمیات کادفترقائم کرنےکی سفارش
  • بریکنگ :- مری کا ہل اسٹیشن تجاوزات کی وجہ سے گلیوں میں تبدیل ہوگیا،رپورٹ
  • بریکنگ :- غیر قانونی عمارتیں گرانےکی سفارش کی گئی ہے،رپورٹ
  • بریکنگ :- مشینری موجود تھی لیکن آدھا عملہ غائب تھا، رپورٹ

سینیٹ الیکشن میں مسترد ووٹوں کا معاملہ، رپورٹ پی پی قیادت کو پیش

Published On 13 March,2021 06:39 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے امیدواروں کو چیئر مین سینیٹ اور ڈپٹی چیئر مین کے الیکشن کے دوران شکست کی رپورٹ پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کی قیادت کو پیش کر دی گئی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پی پی قیادت کو پیش کی گئی رپورٹ کے مطابق سینیٹ الیکشن میں مسترد ہونے والے 7 ووٹوں والے افراد نے الیکشن کے عملے سے ووٹنگ کا طریقہ پوچھا، عملے نے انہیں بتایا کہ ڈبے میں نام پر اسٹیمپ لگانی ہے۔

رپورٹ کے مطابق ان ارکان کے مطابق اس عمل میں کوئی بدنیتی شامل نہیں، ساتوں ارکان خود سامنے آئے ہیں اور انہوں نے بیان دیا، اس بات کی تصدیق سینیٹ میں موجود لوگوں سے بھی ہوئی جنہوں نے انہیں عملے سے بات کرتے دیکھا۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز چیئر مین سینیٹ اور ڈپٹی چیئر مین سینیٹ کے الیکشن میں پاکستان ڈیمو کریٹک (پی ڈی ایم) کو حکومتی کے حمایت یافتہ امیدواروں کے ہاتھوں ہزیمت کا سامنا کرنا پڑا تھا، صادق سنجرانی نے یوسف رضا گیلانی جبکہ مرزا محمد آفریدی نے مولانا عبد الغفور کو شکست سے دو چار کیا تھا۔

چیئر مین سینیٹ کے الیکشن میں پی ڈی ایم کے امیدوار کے 8 ووٹ ضائع ہوئے تھے جبکہ حیران کن طور پر ڈپٹی چیئر مین سینیٹ کو الیکشن کے دوران 7 ووٹ زیادہ ملے تھے۔

یہ بھی پڑھیں: سینیٹ الیکشن: بلاول نے لیگی سینیٹرز کی جانب سے ووٹ نہ دینے کا تاثر مسترد کر دیا

دوسری طرف سینیٹ الیکشن کے دوران پریذائیڈنگ آفیسر کی ذمہ داری ادا کرنے والے سیّد مظفر حسین شاہ نے اہم انکشافات کیے ہیں۔

مظفرحسین شاہ نے اپوزیشن کے الزامات مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ پی ڈی ایم کے 7ارکان نے جان بوجھ کر ووٹ ضائع کئے۔ پارلیمنٹ کی کارروائی عدالت میں چیلنج نہیں ہو سکتی۔

ان کا کہنا تھا کہ حفیظ شیخ اور سندھ میں صدرالدین شاہ راشدی کے ووٹ اسی بنیاد پر مسترد کئے گئے تھے، سات ووٹ کی چوری اپوزیشن کے اپنے گھر میں سے ہوئی ہے۔ اب اپوزیشن خود تحقیقات کرے کہ وہ چوری کن ارکان نے کی ہے۔ میرے اوپر تنقید بلاوجہ ہے۔ ماضی میں صدر نے اسحاق ڈار اور سردار یعقوب ناصر کو بھی پریذائیڈنگ افسر مقرر کیا تھا۔ اپوزیشن کو تفصیلی سن کر اپنا فیصلہ دیا۔

دوسری طرف پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے چیئر مین بلاول بھٹو زرداری نے چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کے انتخاب میں پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سینیٹرز کی جانب سے اپوزیشن کے امیدواروں کو ووٹ نہ دینے کے تاثر کو مسترد کردیا۔

صحافیوں کی طرف سے چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری سے پوچھا گیا کہ اس طرح کی اطلاعات ہیں کہ مسلم لیگ (ن) کے سینیٹرز نے پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے امیدواروں کے لیے ووٹ نہیں دیا تو اس پر بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ سب نے وفا کی۔ مجھے پتا ہے، ہم سب کو پتا ہے کہ ہم پی ڈی ایم کے متحد ہونے کی وجہ سے (سینیٹ کی نشستیں) جیتیں، مزید یہ کہ ہم اسی لیے اتنے ووٹ حاصل کرسکے کہ سب نے وفا کی سب نے ساتھ دیا۔  گزشتہ سینیٹ انتخابات میں جو داغ لگا تھا اپوزیشن کے سینیٹر نے وہ داغ حالیہ انتخابات میں اپنے کردار سے دھو دیا۔