تازہ ترین
  • بریکنگ :- عمران خان کی زیر صدارت پی ٹی آئی قیادت کا اجلاس
  • بریکنگ :- 13اگست کے جلسے اور شہباز گل کی گرفتاری کی صورتحال پرغور،ذرائع
  • بریکنگ :- 13 اگست کا جلسہ ہر حال میں ہوگا، بھرپور تیاری کریں، عمران خان
  • بریکنگ :- شہباز گل کی گرفتاری، پی ٹی آئی کا ایف آئی اے سے رجوع کرنےکا فیصلہ
  • بریکنگ :- اسلام آباد:درخواست علی اعوان کی جانب سے تیار کی گئی،ذرائع
  • بریکنگ :- عمران خان سمیت پی ٹی آئی قیادت کی شہبازگل کی گرفتاری کی مذمت
  • بریکنگ :- فیصل چودھری شہباز گل کے مقدمے میں معاونت کریں گے، اجلاس میں فیصلہ
  • بریکنگ :- حکومت فاشزم پراترآئی ہے،چیئرمین تحریک انصاف عمران خان
  • بریکنگ :- سیاسی کارکنوں کےساتھ غیرجمہوری رویہ اختیارکیاجارہاہے،عمران خان
  • بریکنگ :- حکومت کےفاشسٹ رویےکوکسی صورت برداشت نہیں کریں گے،عمران خان
  • بریکنگ :- عوام کی طاقت ہمارےساتھ ہے، کسی سےڈرنےوالےنہیں،عمران خان
  • بریکنگ :- اسلام آباد:امپورٹڈ حکومت کےدن گنےجاچکےہیں،عمران خان

حکومت کو پریشر میں رکھنے کے بجائے آرام سے کام کرنے دیا جائے: اسحاق ڈار

Published On 19 May,2022 07:38 pm

لاہور: (دنیا نیوز) سابق وفاقی وزیر خزانہ اورپاکستان مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ حکومت کو پریشر میں رکھنے کے بجائے آرام سے کام کرنے دیا جائے، جب پریشر میں ہوں گے تو رکاوٹیں آئیں گی ۔ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں نہیں بڑھائیں گے۔

دنیا نیوز کے پروگرام ’نقطہ نظر‘ میں گفتگو کرتے ہوئے سینیٹر اسحاق ڈار نے کہا کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کا مسئلہ بنا ہوا ہے، عمران خان کہہ گئے 30 جون تک عوام پر بوجھ نہیں ڈالا جائے گا، میں نے ایک حل دیا ہے، عوام تو مہنگائی کی چکی میں پس چکے، قیمتیں نہیں بڑھائیں گے، پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کا بوجھ وفاق اور صوبے اٹھائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ سابقہ حکومت بدترین مالی خسارہ چھوڑ کر گئی ہے، یہ آنے والا بجٹ خسارہ ہو گا، ڈالر کی قیمت بڑھنے سے ہمارے قرضے بھی بڑھ جاتے ہیں، لگژری آئٹمز پر پابندی لگانا ایک اچھا فیصلہ ہے، ڈالر200روپے کا نہیں ہونا چاہیے تھا۔ حکومت کو پریشر میں رکھنے کے بجائے آرام سے کام کرنے دیا جائے، جب پریشر میں ہوں گے تو رکاوٹیں آئیں گی۔

سابق وفاقی وزیر خزانہ نے کہا کہ پہلے بھی کہتا رہا روپے کی قدر کو نہیں گرنا چاہیے، انہوں نے روپے کو فری فال چھوڑا، روپے کو فری فال چھوڑنے پر چار ہزار ارب قرضوں کا بوجھ بڑھا، چارسال کی معاشی تباہی ایک ماہ میں توٹھیک نہیں ہوسکتی۔

ن لیگی رہنما کا مزید کہنا تھا کہ ایٹمی دھماکوں کے بعد پابندیوں کے باوجود ہم نے معاشی حالات کو بہتر کیا تھا، حالات کو بہترکرنے کے لیے وقت چاہیے ہوتا ہے، یہ صرف (ن) لیگ نہیں 11 پارٹیوں کی اتحادی حکومت ہے، حکومت کومدت پوری کرنی چاہیے، میڈیکل ایشوز ہے جب علاج مکمل ہوگا تب واپس آؤں گا، پہلے میرا پاسپورٹ کینسل کیا گیا چند دن پہلے پاسپورٹ ملا ہے۔