مبینہ روسی ’جاسوس وہیل‘ سویڈن پہنچ گئی

Published On 30 May,2023 12:21 pm

اسٹاک ہوم: (ویب ڈیسک) روس کی جانب سے مبینہ طور پر ’جاسوسی‘ کی تربیت کے بعد سفید رنگت کی بیلوگا وہیل اب سویڈن میں دیکھی گئی ہے۔

2019 میں اسے ناروے کے دور دراز علاقے فِن مارک میں دیکھا گیا تھا، اب اسی وہیل کو سویڈن میں دیکھا گیا ہے جس پر کبھی برقی آلات نصب تھے، ماہرین کا خیال ہے کہ بیلوگا قسم کی وہیل کو روسی بحری افواج نے بطورِ خاص جاسوسی سکھائی تھی۔

پھر 2019 کے بعد اس نے اپنی رفتار بڑھائی اور سویڈن کی راہ لی، اس ضمن میں ون وہیل نامی تنظیم میں بحری حیاتیات کے ماہر، سباسٹیان اسٹرینڈ نے کہا ہے کہ ’ وہیل نے اپنا سفر تیز کر دیا ہے جس کی وجہ اب تک معلوم نہیں ہوسکی۔‘

سویڈن کےجنوب مغربی ساحل، ہیونے بوسٹرانڈ کے مقام پر اسے دیکھا گیا ہے۔

ماہرین کے مطابق شاید یہ اپنے کسی ساتھی کی تلاش میں ہے اور تیزی سے حرکت کر رہی ہے، بیلوگا وہیل عموماً دوسری ساتھیوں کے ساتھ مل کر رہتی ہیں۔

واضح رہے کہ 2019 میں وہیل جب ناروے پہنچی تھی تو ناروے مرکز برائے فشریز کے ماہرین نے اس پر لگا برقی آلہ ہٹا دیا تھا، اس وہیل پر ایک جدید کیمرہ لگا تھا جس کی پشت پر روسی شہر ’سینٹ پیٹرزبرگ‘ کا نام لکھا تھا، اسی بنا پر جاسوس وہیل کا خدشہ ظاہرکیا گیا ہے۔

تاہم روس نے ناروے کے اس دعوے پر کوئی ردِ عمل آج تک نہیں دیا ہے، واضح رہے کہ جن پانیوں میں وہیل دکھائی دی ہے وہ مغربی اور روسی آبدوزوں کی آمدورفت کا اہم مقام بھی ہے۔
 

Advertisement