تازہ ترین
  • بریکنگ :- افغانستان میں امن کیلئےہماری کوششیں جاری ہیں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- طالبان سےبات کررہےہیں دیگر گروپس کوبھی حکومت میں شامل کریں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- پاکستان افغانستان میں استحکام چاہتاہے،فوادچودھری
  • بریکنگ :- افغان حکومت کوتسلیم کرنےسےمتعلق خطےکےممالک کوساتھ لےکرچل رہےہیں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- ڈالرکی افغانستان اسمگلنگ کےباعث روپےکی قدرمیں کمی آئی،فوادچودھری
  • بریکنگ :- رواں سال گندم اورگنےکی ریکارڈ پیداوار ہوئی ہے،فوادچودھری
  • بریکنگ :- کوروناکےباعث دنیابھرمیں اشیائےضروریہ کی قیمتوں میں اضافہ ہوا،فوادچودھری
  • بریکنگ :- زراعت کےشعبےمیں ملکی معیشت میں 1100ارب کااضافہ کیاگیا،فوادچودھری
  • بریکنگ :- ٹیکسٹائل کی صنعت کوبھی فروغ حاصل ہورہاہے،فوادچودھری
  • بریکنگ :- تعمیرات کےشعبےمیں بھی ریکارڈ سرمایہ کاری آرہی ہے،فوادچودھری
  • بریکنگ :- افغانستان کی صور تحال کااثربراہ راست پاکستان پرہوتاہے،فوادچودھری
  • بریکنگ :- مودی اوران کی جماعت کی وجہ سےحالات میں بہتری نہیں آرہی،فوادچودھری
  • بریکنگ :- پاک بھارت میچ کیلئےبہت پرجوش ہیں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- پڑوسی ممالک کےساتھ مل کرافغان حکومت کوتسلیم کیاجائےگا،فوادچودھری
  • بریکنگ :- دلی میں آج جلسہ کریں تومودی سے بڑاجلسہ ہوگا ،فوادچودھری

کورونا کیسز بڑھنے پر اردوان نے ترکی میں مکمل لاک ڈاؤن کا اعلان کر دیا

Published On 27 April,2021 05:25 pm

استنبول: (ویب ڈیسک) ملک میں کورونا وائرس کے بڑھتے ہوئے کیسز کے بعد ترک صدر رجب طیب اردوان نے مکمل لاک ڈاؤن کا اعلان کیا ہے۔

ترک صدر نے وبا کے باعث اموات میں اضافہ پر ملک بھر میں 17 مئی تک لاک ڈاؤن لگانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اس دوران تمام سکول بند رہیں گے جبکہ بین الصوبائی آمدورفت حکومت کی اجازت سے مشروط ہوگی، پبلک ٹرانسپورٹ میں بھی صرف محدود حد تک افراد بیٹھ سکیں گے۔

لاک ڈاؤن کے دوران تمام افراد گھروں میں رہنے کے پابند ہیں تاہم صرف علاج یا دوائی لینے کے لیے گھر سے باہر نکلنے کی اجازت ہوگی، اس کے علاوہ ایسے افراد جن کا تعلق میڈیسن، ایمرجنسی سروس اور اشیائے خورونوش کے محکموں سے ہے پابندیوں سے مستثنیٰ ہیں۔

ترک صدر کا کہنا تھا کہ ایک ایسے وقت میں جب یورپ میں تمام پابندیاں ہٹائی جارہی ہیں، ہمیں بھی تیزی سے کیسز پر قابو پانا ہوگا اور اس تعداد کو 5ہزار سے کم پر لانا ہوگا، ورنہ ہمیں بھاری نقصان اٹھانا پڑے گا۔