تازہ ترین
  • بریکنگ :- ملک بھرمیں 24 گھنٹےکےدوران کوروناسےمزید 17 اموات
  • بریکنگ :- ملک بھرمیں کوروناسےجاں بحق افرادکی تعداد 28 ہزار 269 ہوگئی
  • بریکنگ :- 24 گھنٹےکےدوران 44 ہزار 831 کوروناٹیسٹ کیےگئے،این سی اوسی
  • بریکنگ :- 24 گھنٹےمیں کوروناکےمزید 720 کیس رپورٹ،این سی اوسی
  • بریکنگ :- ملک میں کورونامثبت کیسزکی شرح 1.60 فیصدرہی،این سی اوسی

لاک ڈاؤن: ایشیائی ممالک میں جعلی خبریں خوف پھیلانے کا سبب بننے لگیں

Last Updated On 29 May,2020 07:58 pm

لاہور: (ویب ڈیسک) دنیا بھر میں کورونا وائرس کے کیسز میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے، جہاں یہ وباء تیزی سے پھیل رہی ہے وہی پر وائرس سے متعلق جنوبی ایشیا میں افواہوں اور جعلی خبریں بھی پھیلائی ج رہی ہے جو خوف کا باعث بن رہی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق جنوبی ایشیا میں کورونا وائرس کی وبا کے دوران گمراہ کُن معلومات اور افواہیں خوف و ہراس کا سبب بن رہی ہیں۔ پاکستان اور بھارت سمیت خطے کے دیگر ملکوں میں لاک ڈاؤن کے دوران متعدد ایسی غلط معلومات اور افواہیں پھیلائی گئیں جن کے سبب عوام میں خوف و ہراس اور بے چینی پھیل گئی ہے۔

پاکستان میں جہاں کورونا وائرس کے سبب نافذ کیے گئے لاک ڈاؤن میں نرمی کی گئی ہے۔ سماجی میڈیا پر گمراہ کن ویڈیو شیئر کی گئی جس میں لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی کرنے والے ایک دکاندار کو دکان چھوڑ کر بھاگتے دیکھا جا سکتا ہے۔

خبر رساں ادارے کے مطابق درحقیقت یہ ویڈیو 2015 میں پولیس کے قحبہ خانے پر چھاپے کی ہے جس میں ایک شخص کو بھاگتے ہوئے دیکھا جا سکتا تھا۔

پاکستانی صارفین کی طرف سے ویڈیو کا پرانا ہونے کی نشاندہی کیے جانے کے باوجود مذکورہ ویڈیو کو سماجی رابطوں کی ویب سائٹس فیس بک، ٹوئٹر، یوٹیوب اور واٹس ایپ پر لاکھوں صارفین نے دیکھا۔

خبر رساں ادارے کے مطابق بھارت میں رواں برس مارچ میں لاک ڈاؤن نافذ کیے جانے کے بعد غلط معلومات کا پھیلاؤ بھی عروج پر ہے جن میں سیاسی کردار کشی، لاک ڈاؤن میں مزید سختی سے متعلق افواہیں اور فرقہ واریت سے متعلق غلط معلومات کی تشہیر سرِفہرست ہیں۔

خبر رساں ادارے کے مطابق بھارت میں لاک ڈاؤن کے دوران ایک ایسی ویڈیو جاری کی گئی جس میں دیکھا جاسکتا ہے کہ ایک شخص دوسرے پر پر کلہاڑی سے حملہ کر رہے ہیں۔ تحقیق پر پتہ چلا یہ ویڈیو بھارت کی نہیں تھی۔

ویڈیو کے بارے میں چند صارفین کا کہنا تھا کہ یہ ویڈیو کسی دوسرے ملک کی ہے۔ جب کہ کچھ صارفین کی طرف سے اس ویڈیو کو بھارت میں کرفیو نافذ کرنے کے مطالبے کے بطور ثبوت پیش کیا گیا۔

اے ایف پی نے فروری کے بعد سے اب تک ایشیا میں نافذ کردہ لاک ڈاؤن کے دوران غلط معلومات پر مبنی 150 سے زائد رپورٹس شائع کی ہیں جنہیں اس رپورٹ میں جمع کیا گیا ہے۔

لاک ڈاؤن کے دوران ایشیائی ملک فلپائن میں فیس بک پر ایک ویڈیو شیئر کی گئی۔ جس میں ایک موٹر سائیکل پر سوار شخص کو دکھایا گیا۔ جسے کورونا وائرس کے ٹیسٹ کے لیے قائم کردہ چیک پوائنٹ پر نہ رکنے کی وجہ سے گولی مار دی گئی۔

فلپائن میں وائرل ہونے والی یہ ویڈیو درحقیقت پولیس ٹریننگ مشقوں کی تھی۔ جسے ہزاروں لوگوں نے دیکھا۔

ایشیائی ملک تھائی لینڈ میں لاک ڈاؤن کے دوران وائرل ہونے والی ویڈیو میں خریداروں کو ملائیشیا میں لاک ڈاؤن میں سختی کیے جانے کے سبب بے چینی میں خریداری کرتے دیکھا گیا۔

مذکورہ ویڈیو کو فیس بک پر ایسے کمنٹس کے ساتھ شیئر کیا گیا کہ ایسی صورتِ حال کا سامنا تھائی لینڈ کے لوگوں کو بھی ممکنہ طور پر کرنا پڑ سکتا ہے۔

اے ایف پی کے مطابق مذکورہ ویڈیو لاطینی ملک برازیل میں نومبر 2019ء میں ‘بلیک فرائیڈے’ پر لگنے والی سیل کی تھی۔

آسٹریلیا کی کوئنز لینڈ یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی میں میڈیا کے پروفیسر ایکسل برنس کا کہنا ہے کہ آن لائن غلط معلومات کی تشہیر اس صورت میں ہوتی ہے جب حکومتیں عوام کو صحیح طریقے سے معلومات فراہم نہ کر سکیں۔

برنس کا مزید کہنا تھا کہ غلط معلومات کی تشہیر میں اضافے کی وجہ یہ ہے کہ لوگ کورونا وائرس سے متعلق اپنے سوالات کے جواب جاننا چاہتے ہیں اور جب انہیں جوابات نہیں ملتے تو وہ مطلوبہ معلومات جاننے کے لیے ارد گرد دیکھتے ہیں۔