تازہ ترین
  • بریکنگ :- پاک آرمی رائفل ایسوسی ایشن کے41ویں مقابلےاختتام پذیر
  • بریکنگ :- آرمی چیف کی بطورمہمان خصوصی تقریب میں شرکت،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- تقریب کاانعقادجہلم گیریژن میں کیاگیا،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- میگاشوٹنگ ایونٹ 26اکتوبرسےیکم دسمبرتک منعقدہوا
  • بریکنگ :- مقابلوں میں آرمی،نیوی اورایئرفورس کےنشانہ بازوں نےحصہ لیا
  • بریکنگ :- آرمی چیف نےنمایاں کارکردگی دکھانےوالوں میں انعامات تقسیم کیے
  • بریکنگ :- سول آرمڈفورسزاورشہریوں سمیت 2500سےزائدنشانہ بازوں کی شرکت
  • بریکنگ :- انٹرفارمیشنزمقابلوں میں ملتان کورپہلےاورمنگلاکوردوسرےنمبرپررہی
  • بریکنگ :- انٹرسروسزمیچوں میں پاک فوج نےتمام مقابلےجیت لیے
  • بریکنگ :- دیگرمقابلوں میں پنجاب رینجرزپہلے،گلگت بلتستان اسکاؤٹ دوسرےنمبرپر
  • بریکنگ :- آرمی چیف نےمارکس مین شپ میں اعلیٰ مہارتوں کےمظاہرےکوسراہا
  • بریکنگ :- ایک جوان کی شوٹنگ مہارت اس کاطرہ امتیازہے،آرمی چیف
  • بریکنگ :- بنیادی فوجی تربیت میں شوٹنگ مہارت مرکزی حیثیت رکھتی ہے،آرمی چیف

ریسٹورنٹ میں جانا کورونا کا خطرہ مول لینے کے مترادف قرار

Published On 31 October,2020 06:23 pm

لاہور: (ویب ڈیسک) ایک تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ ریسٹورنٹ میں جانا کورونا وائرس کا خطرہ مول لینے کے مترادف ہے۔

تفصیلات کے مطابق کورونا وائرس دنیا بھرمیں روزانہ کئی اموات کا سبب بن رہا ہے اور ابھی تک اس کی شدت میں کمی نہیں آئی۔ اس لیے ان تمام احتیاطی تدابیر پر عمل ضروری ہے جن کی وجہ سے آپ کورونا وائرس سے محفوظ رہ سکتے ہیں۔

ایک جدیدریسرچ میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ ریستوران میں جانا کورونا وائرس کا خطرہ مول لینے کے مترادف ہے۔

امریکی محکمہ صحت کی جانب سے شائع کردہ اس جدید ریسرچ کے مطابق جب لوگ ریستوران کا رخ کرتے ہیں تو وہاں بھیڑ ہوجاتی ہے جس سے کورونا وائرس پھیلنے کے خدشات بہت بڑھ جاتے ہیں۔

مزید یہ کہ ریستوران میں کھانا کھانے کے لیے ماسک اتارنا پڑتا ہے اور اس طرح کورونا وائرس سے متاثر ہونے کا خدشہ ہوتا ہے۔

اس کے برعکس پبلک ٹرانسپورٹ میں ایسا نہیں ہوتا، میٹرو، ریل گاڑی یا دیگر ذرائع میں ماسک اتارنے کی کوئی ضرورت پیش نہیں آتی۔

محققین نے ایسے 300 افراد کو ایک سوالنامہ دیا جو امریکہ کے مختلف گیارہ بڑے ہسپتالوں سے کورونا ٹیسٹ کرواکر واپس آئے تھے۔ ان میں سے آدھے سے زائد افراد کا کورونا ٹیسٹ مثبت آیا تھا۔ سوالنامہ میں یہ تین سوال پوچھے گئے تھے:

کیا آپ کورونا علامات ظاہر ہونے سے 14 دن پہلے کبھی خریداری کے لیے نکلے تھے؟

کیا آ پ کسی ایسی جگہ گئے جہاں دس سے زائد افراد جمع ہوں، جیسے ریسٹورنٹ، اسپورٹ کلب وغیرہ

ماہرین نے ان تمام افراد سے یہ تحقیق کی کہ وہ ماسک کا مسلسل استعمال کرتے ہیں اور ہر طرح کی احتیاطی تدابیر پر مکمل عمل کرتے ہیں لیکن جب کسی ریسٹورنٹ گئے تو صرف اسی وقت انہوں نے اپنا ماسک اتارا۔

تحقیق میں یہ بات سامنے آئی کہ ایسے افراد جو کسی ریسٹورنٹ گئے تھے ان کے کورونا ٹیسٹ مثبت آئے تھے بہ نسبت ان افراد کے جنہوں نے خریداری یا پبلک ٹرانسپورٹ میں سفر کیا تھا۔

ریسرچ میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ ریستوران سے کورونا وائرس سے زیادہ تیزی سے پھیل رہا ہے جبکہ پبلک ٹرانسپورٹ یا سپورٹس کلب وغیرہ میں یہ تعداد کم ہے۔