تازہ ترین
  • بریکنگ :- جب حق کی بات کرتےہیں توکہتےہیں آپ کاسیاست میں کیا کام،فضل الرحمان
  • بریکنگ :- عمران خان کبھی کہتےہیں چین جیسا نظام لےکرآئیں گے،فضل الرحمان
  • بریکنگ :- کبھی ایران جیساانقلاب توکبھی ریاست مدینہ کی بات کرتےہیں،فضل الرحمان
  • بریکنگ :- عمران خان کی حکومت بیرونی ایجنڈےپرعمل پیراہے،مولانافضل الرحمان
  • بریکنگ :- ہمیں معلوم ہےآپ آئین کےساتھ کس طرح مذاق کررہےہیں،فضل الرحمان
  • بریکنگ :- لسبیلہ: پی ٹی آئی حکومت نے معیشت تباہ کردی،مولانا فضل الرحمان
  • بریکنگ :- عمران خان کہتےہیں مجھےنکالاتوخطرناک بن جاؤں گا،فضل الرحمان
  • بریکنگ :- لسبیلہ: ہمیں آپ سے کوئی خطرہ نہیں،مولانا فضل الرحمان
  • بریکنگ :- آپ کوپہلےبھی کچھ نہیں سمجھااب بھی کچھ نہیں سمجھتے،فضل الرحمان

بھارتی فوج کی ایل او سی پر بلا اشتعال فائرنگ، 45 سالہ شہری زخمی

Last Updated On 02 February,2020 12:20 pm

راولپنڈی: (دنیا نیوز) پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کے مطابق بھارتی فوج نے ایک مرتبہ پھر لائن آف کنٹرول پر سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بلا اشتعال فائرنگ کی۔

آئی ایس پی آر کے مطابق بھارتی فوج نے لائن آف کنٹرول (ایل اوسی) کے ستوال سیکٹر پر بلااشتعال فائرنگ کی، دشمن کی فوج نے شہری آبادی کو نشانہ بنایا۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کے مطابق لائن آف کنٹرول پر بھارتی فوج کی جانب سے فائرنگ کے باعث 45 سالہ شخص زخمی ہو گیا، زخمی ہونے والے شخص کا تعلق مدار پور گاؤں سے ہے۔

آئی ایس پی آر کا مزید کہنا ہے کہ زخمی ہونے والے 45 سالہ شخص کو طبی امداد کے لیے فوری طور پر ہسپتال منتقل کر دیا ہے۔

دوسری طرف لائن آف کنٹرول (ایل او سی) پر بھارتی فوج کی جانب سے سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کے بعد پاکستان نے بھارتی ہائی کمیشن کے سفارتکار کو دفتر خارجہ طلب کیا۔

ایل او سی پر سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی پر پاکستان نے بھارتی سفارتکار سے شدید احتجاج کیا۔

دفتر خارجہ نے بھارتی فوج کی طرف سے بے گناہ شہریوں کو نشانہ بنانے کی مذمت کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ بھارت کی طرف سے ایسے احمقانہ اقدامات 2003 ء کی جنگ بندی معاہدے کی صریحاً خلاف ورزی، عالمی انسانی حقوق اور بین الاقوامی اقدار کے مکمل منافی ہیں۔

ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی کا مزید کہنا تھا کہ کنٹرول لائن اور ورکنگ بائونڈری کے ساتھ کشیدگی بڑھا کر بھارت دنیا کی توجہ مقبوضہ کشمیر میں بدترین انسانی حقوق کی صورتحال سے ہٹا نہیں سکتا۔

ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ بھارت 2003 ء کے جنگ بندی معاہدے کی پاسداری کرے، جنگ بندی کی دانستہ طور پر خلاف ورزیوں کے حالیہ واقعے بھارت کے اندورنی حالات سے دنیا کی نظر نہیں ہٹا سکتی۔