تازہ ترین
  • بریکنگ :- ملک بھرمیں 24 گھنٹےکےدوران کوروناسےمزید 17 اموات
  • بریکنگ :- ملک بھرمیں کوروناسےجاں بحق افرادکی تعداد 28 ہزار 269 ہوگئی
  • بریکنگ :- 24 گھنٹےکےدوران 44 ہزار 831 کوروناٹیسٹ کیےگئے،این سی اوسی
  • بریکنگ :- 24 گھنٹےمیں کوروناکےمزید 720 کیس رپورٹ،این سی اوسی
  • بریکنگ :- ملک میں کورونامثبت کیسزکی شرح 1.60 فیصدرہی،این سی اوسی

عوام کی اکثریت لاک ڈاؤن فوری ختم کرنے کی حمایتی: سروے

Last Updated On 18 May,2020 10:41 am

اسلام آباد: (روزنامہ دنیا) ملک میں عوام کی اکثریت سمجھتی ہے کہ کورونا وائرس کی روک تھام کے لیے لگایا گیا لاک ڈاؤن فوری ختم کر دینا چاہیے یا کم از کم سمارٹ لاک ڈاؤن کا نفاذ ہونا چاہیے۔

انسٹی ٹیوٹ برائے عوامی رائے ریسرچ کے تحت ملک کے چار صوبوں میں لاک ڈاؤن اور اس کے اثرات جاننے کے لیے عوامی سروے کیا گیا۔ اس سروے کے مطابق صرف 8 فیصد عوام سمجھتے ہیں کہ کورونا سے بچاؤ میں لاک ڈاؤن 100 فیصد کامیاب رہا جبکہ 38 فیصد لوگ اسے ناکام قرار دیتے ہیں۔ عوام میں 31 فیصد لاک ڈاؤن کا فوری خاتمہ، 27 فیصد توسیع جبکہ 27 فیصد ہی سمارٹ لاک ڈاؤن کے حامی ہیں۔

صوبوں کا موازنہ کیا جائے تو بلوچستان میں سب سے زیادہ 16 فیصد لوگوں کا خیال ہے کہ لاک ڈاؤن مکمل طور پر کامیاب رہا۔ پنجاب میں ان لوگوں کی تعداد 36 فیصد کے ساتھ نمایاں ہے جو سمجھتے ہیں کہ لاک ڈاؤن ناکام رہا۔ لاک ڈاؤن پر سب سے زیادہ مخالفت سندھ میں ہے جہاں 37 فیصد لوگوں نے اسے فوری ختم کرنے پر زور دیا، خیبرپختونخوا کے 40 فیصد عوام سمارٹ لاک ڈاؤن چاہتے ہیں۔ آمدنی کے اعتبار سے دیکھا جائے تو ماہانہ 25 ہزار یا اس سے کم کمانے والوں کی اکثریت لاک ڈاؤن فوری ختم کرنے یا کم از کم سمارٹ لاک ڈاؤن کے نفاذ کی حامی نظر آئی۔

سروے کے مطابق 23 فیصد کے مقابلے میں 44 فیصد لوگوں نے بتایا کہ لاک ڈاؤن میں ان کے گھریلو اخراجات بڑھ گئے ہیں جبکہ 22 فیصد نے کہا کہ اخراجات برقرار ہیں۔ سروے میں شریک 68 فیصد لوگوں کا کہنا تھا کہ ان کے معاشی حالات بدتر ہوگئے ہیں، اور تمام ہی صوبوں میں معاشی طور پر پریشان لوگوں کی شرح یکساں نظر آتی ہے۔ لاک ڈاؤن کا فوری خاتمہ چاہنے والے 31 فیصد عوام میں سے 85 فیصد یہی لوگ ہیں جو معاشی طور پر زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔