تازہ ترین
  • بریکنگ :- کوئٹہ اورلسبیلہ کےعلاوہ بلوچستان کے 32اضلاع میں بلدیاتی الیکشن
  • بریکنگ :- بلدیاتی انتخابات کےلیےبیلٹ پیپرزاورانتخابی میٹریل کی ترسیل کاعمل مکمل
  • بریکنگ :- پولنگ صبح 8بجےسےشام 5بجےتک بغیرکسی وقفےکےجاری رہےگی
  • بریکنگ :- کوئٹہ:7 میونسپل کارپوریشن،838یونین کونسلزمیں پولنگ ہوگی
  • بریکنگ :- کوئٹہ:5ہزار345دیہی وارڈاور9ہزار14شہری وارڈکےلیےپولنگ ہوگی
  • بریکنگ :- کوئٹہ:35لاکھ52ہزار298ووٹرز اپنا حق رائے دہی استعمال کریں گے
  • بریکنگ :- کوئٹہ:20لاکھ 6ہزار274مرداور15لاکھ46ہزار124خواتین ووٹرزہیں
  • بریکنگ :- کوئٹہ:32اضلاع میں 5ہزار226پولنگ اسٹیشنزقائم
  • بریکنگ :- کوئٹہ:2ہزار54پولنگ اسٹیشنزانتہائی حساس،ایک ہزار974حساس قرار
  • بریکنگ :- الیکشن میں16 ہزار195امیدوارمدمقابل،102 امیدواربلامقابلہ منتخب
  • بریکنگ :- کوئٹہ:پولنگ اسٹیشنزپرپولیس،لیویزاورایف سی کےجوان تعینات ہوں گے

لوگ کورونا وائرس سے بچاؤ کیلئے ویکسین لازمی لگوائیں، ڈاکٹر یاسمین راشد

Published On 19 April,2021 07:57 pm

لاہور: (دنیا نیوز) صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد نے کہا ہے کہ لوگوں سے بار بار درخواست کی جا رہی ہے کہ وہ عالمی وبا سے بچاؤ کیلئے ویکسین لازمی لگوائیں۔

انہوں نے بتایا کہ پنجاب حکومت نے ڈیڑھ ارب روپے کورونا ویکسین کے لیے علیحدہ سے مختص کئے ہیں، 30 لاکھ حفاظتی ٹیکوں کی کھیپ 24 اپریل کو پہنچ جائے گی۔

یہ بات انہوں نے دنیا نیوز کے پروگرام ’’نقطہ نظر‘‘ میں خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہی۔ ڈاکٹر یاسمین راشد کا کہنا تھا کہ صوبے میں ویکسی نیشن پروگرام بہت اچھا چل رہا ہے، سب سے پہلے ہیلتھ ورکرز کی ویکسی نیشن کی گئی، اس کے بعد 60 سال سے زائد عمر والوں کو یہ سہولت دی۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم نے ہسپتالوں میں سہولیات کو بہتر کیا ہے۔ سرکاری ہسپتالوں میں کسی مریض کو ٹیکہ باہر سے نہیں منگوانا پڑتا، ہسپتالوں میں تمام ادویات موجود ہیں۔ تاہم پرائیویٹ ہسپتالوں میں تو مریض کا خرچہ ہوگا۔

صوبائی وزیر صحت نے کہا کہ لاہور میں کورونا وائرس میں مبتلا مریضوں کی تعداد زیادہ ہے لیکن ہسپتالوں میں اس وقت 20 سے 30 فیصد بیڈز خالی ہے۔ اللہ کا شکر ہے کہ بھارت کی نسبت پاکستان میں صورتحال بہتر ہے، وہاں مریضوں کے لیے بیڈز تک خالی نہیں ہیں۔

تعلیمی صورتحال پر بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ جن بچوں کے امتحان ضروری ان کے لیے کلاسوں کو کھولا گیا، بڑی کلاسوں کے بچوں کو سکولوں میں بلایا جا رہا ہے۔ بچوں کے امتحانوں کا سال ہے، نہیں چاہتے کہ ضائع ہو جائے۔