تازہ ترین
  • بریکنگ :- عدالت کاوفاقی حکومت کوٹی اوآرزبناکرعدالت میں پیش کرنےکاحکم
  • بریکنگ :- آئی جی اسلام آبادشیریں مزاری کوسیکیورٹی فراہم کریں،عدالت
  • بریکنگ :- اسلام آبادہائیکورٹ کےحکم پرشیریں مزاری کورہا کردیاگیا
  • بریکنگ :- شیریں مزاری کاموبائل فون ودیگرچیزیں انہیں واپس کردی گئیں
  • بریکنگ :- اسلام آباد:شیریں مزاری گرفتاری کیس،سماعت 25مئی تک ملتوی
  • بریکنگ :- اسلام آبادہائیکورٹ کامعاملےکی جوڈیشل انکوائری کاحکم

'نون لیگ کا انتخاب جیتنا درست، پیپلزپارٹی جیتے تو ڈیل کا نتیجہ، دہرا معیار منظور نہیں'

Published On 02 May,2021 02:12 pm

کراچی: (دنیا نیوز) وزیر تعلیم سندھ سعید غنی نے کہا ہے کہ سلیکٹرز کی مدد سے این اے 249 میں جیتنے کا الزام افسوس ناک ہے۔ جہاں نون لیگ جیت جائے وہاں ٹھیک، پیپلزپارٹی جیتے تو ڈیل کا نتیجہ، یہ دہرا معیار نہیں چل سکتا۔

وزیر تعلیم سندھ سعید غنی نے کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ حد سے زیادہ خود اعتمادی نون لیگ کی شکست کی وجہ بنی، اگرسلیکٹرز کے بغیرفتح ممکن نہیں تو نون لیگ تین ضمنی الیکشن کیسے جیتی؟ پیپلز پارٹی ضمنی الیکشن جیتے تو اسٹیبلشمنٹ کی سرپرستی کے ساتھ جیتنے کا الزام لگا دیا جاتا ہے۔ ن لیگ ڈسکہ، وزیر آباد اور نوشہرہ جیتے تو بیانیے کی فتح قرار دیدیا گیا، یہ دہرا معیار کیوں اپنایا جاتا ہے؟

انہوں نے کہا کہ اس وقت پاکستان میں سیاسی طور پر بلاول صاحب کا قد سب سے بڑا ہے،ایک پولنگ اسٹیشن کا نمبر بتائیں جہاں دھاندلی ہوئی، اگر عملہ میں نے لگوایا ہوتا تو ہر پولنگ اسٹیشن پر ہمارا مارجن زیادہ ہوتا۔ چاہتا ہوں کہ یہ بحث ختم ہو، این اے 249 میں ایک فیصد بھی دھاندلی نہیں ہوئی۔ سعید غنی کا کہنا تھا کہ میری اطلاعات کے مطابق وزیر اعظم نے انٹیلی جنس اداروں سے رپورٹ لی ہے کہ پیپلز پارٹی کیسے جیتی ، سب نے یہی جواب دیا کہ آپ کی نالائقی کی وجہ سے جیتی ہے۔