تازہ ترین
  • بریکنگ :- ماضی میں پی ٹی وی اورریڈیوکونیلام کرنےکااعلان ہوا،مریم اورنگزیب
  • بریکنگ :- حکومت آئی توپی ٹی وی اسپورٹس نےمعاہدہ سائن کیا،مریم اورنگزیب
  • بریکنگ :- 22اپریل کوہم نےمعاہدے سےمتعلق فیکٹ فائنڈنگ کمیٹی بنائی،مریم اورنگزیب
  • بریکنگ :- سب کومعلوم ہےپی ٹی وی نےاسپورٹس سےمتعلق معاہدہ کیا،مریم اورنگزیب
  • بریکنگ :- 16ستمبر2021 تک کرکٹ رائٹس پی ٹی وی کےپاس تھے،مریم اورنگزیب
  • بریکنگ :- پی ٹی وی کےحقوق کسی اورچینل کودینےکافیصلہ کیاگیا،مریم اورنگزیب
  • بریکنگ :- پی ٹی وی میں کرکٹ رائٹس کےنام پرڈاکاڈالاگیا،مریم اورنگزیب
  • بریکنگ :- پی ٹی وی پاکستان کی قومی شناخت کاادارہ ہے،مریم اورنگزیب
  • بریکنگ :- صحافت ریاست کاچوتھاستون ہے،وزیراطلاعات مریم اورنگزیب

پارلیمنٹ کامشترکہ اجلاس جلدطلب کیاجائےگا:سینیٹر فیصل جاوید

Published On 10 November,2021 06:09 pm

اسلام آباد:(دنیا نیوز)سینیٹر فیصل جاوید خان نے کہا ہے کہ پارلیمنٹ کامشترکہ اجلاس جلدطلب کیاجائےگا۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پیغام جاری کرتے ہوئے سینیٹر فیصل جاوید خان نے کہا کہ آج وزیراعظم نےسینیٹ کے تمام پی ٹی آئی اور اتحادی اراکین سے ملاقات کی ، وزیراعظم نےانتخابی اصلاحات کے حوالے سے سب کواعتماد میں لیا جبکہ تمام اراکین نے وزیراعظم کو پرزور حمایت کا یقین دلایا ہے۔

فیصل جاوید نے مزید لکھا کہ آنیوالےدنوں میں انتخابی اصلاحات کا بل بھرپور حمایت کے ساتھ پاس کیا جائے گا، وزیراعظم نےایک بار پھر کھلے دل کا مظاہرہ کیا ، اپوزیشن کو ایک بارپھرانتخابی اصلاحات پرمشاورت کاموقع دیا۔

ان کا کہنا تھا کہ اپوزیشن بتائےالیکٹرانک ووٹنگ میں کیا خرابی ہے، نشاندھی کریں، پارلیمان کامشترکہ اجلاس جلدطلب کیاجائےگا جبکہ اوورسیزپاکستانیوں کوانٹرنیٹ ووٹنگ کاحق بھی دیا جائیگا۔

واضح رہے کہ انتخابی اصلاحات سمیت دیگر معاملات پر اتفاق رائے کے لیے بلایا گیا پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس مؤخر کر دیا گیا ہے۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے ایک بیان میں وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری کا کہنا ہے کہ انتخابی اصلاحات ملک کے مستقبل کا معاملہ ہے، ہم نیک نیتی سے کوشش کر رہے ہیں کہ ان معاملات پر اتفاق رائے پیدا ہو، اس سلسلے میں سپیکر اسد قیصر کو اپوزیشن سے ایک بار پھر رابطہ کرنے کا کہا گیا ہے تا کہ ایک متفقہ انتخابی اصلاحات کا بل لایا جا سکے۔

انہوں نے کہا کہ پارلیمان کے مشترکہ اجلاس کو اس مقصد کیلئے موْخر کیا جا رہا ہے۔ ہمیں امید ہے اپوزیشن ان اہم اصلاحات پر سنجیدگی سے غور کرے گی اور ہم پاکستان کے مستقبل کیلئے ایک مشترکہ لائحہ عمل اختیار کر پائیں گے، تاہم ایسا نہ ہونے کی صورت میں ہم اصلاحات سے پیچھے نہیں ہٹ سکتے۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز حکومت کو اسمبلی میں دو بلوں کو متعارف کرانے کی تحریک پر ووٹنگ کے دوران دو بار اپوزیشن کے ہاتھوں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

قومی اسمبلی میں اپوزیشن نے سب سے پہلے پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رکن جاوید حسنین کی جانب سے سیاست دانوں کو اپنی پارٹیاں تبدیل کرنے سے روکنے کے لیے نجی بل پیش کرنے کی اجازت طلب کرنے کی تحریک پر 104 کے مقابلے 117 ووٹوں سے حکومت کو شکست دی۔

اس کے بعد پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی رکن اسمبلی عاصمہ قدیر کی جانب سے خواتین کے خلاف نازیبا ریمارکس دینے والوں کے لیے سزا میں اضافے کے بل پر اپوزیشن نے دوبارہ حکومتی ارکان کو شکست دی۔