تازہ ترین
  • بریکنگ :- اقلیتی برادری کو کوٹہ کے حقوق ملنےچاہئیں،وزیرخارجہ بلاول بھٹو
  • بریکنگ :- اقلیتی برادری کےحقوق کےتحفظ کےلیےاقدامات اٹھانےچاہئیں،بلاول بھٹو
  • بریکنگ :- اقلیتی برادری کے حقوق کیلئے سب کو مل کر کام کرنا ہوگا،بلاول بھٹو
  • بریکنگ :- تمام پاکستانیوں کو یکساں حقوق دینے پر یقین رکھتے ہیں،بلاول بھٹو
  • بریکنگ :- سندھ حکومت میں غیر مسلم کی بھی نمائندگی ہے،وزیرخارجہ
  • بریکنگ :- تقاریرنہیں،عملی اقدامات سےبہتری کی جانب بڑھ سکتےہیں،بلاول بھٹو

‘ہر پاکستانی سمجھتا ہے عمران خان سے زیادتی ہوئی، چاہے مارا جاؤں، کپتان کیساتھ ہوں‘

Published On 30 April,2022 07:00 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) سابق وفاقی وزیر داخلہ اور عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی چیئر مین عمران خان پر اس وقت مشکل وقت ہے، ہر پاکستانی سمجھتا ہے عمران خان سے زیادتی ہوئی،چاہے مارا جاؤں،کپتان کے ساتھ کھڑا ہوں، ایسے میں ساتھ چھوڑنا غداری ہوگی۔

اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیر داخلہ نے کہا کہ عمران خان سے ملکر آرہا ہوں وہ ایسا کوئی کام نہیں کرے گا جس سے ملک کو نقصان ہو، عمران خان ملک کے منافی کوئی قدم نہیں اٹھائے گا۔ میں سیاست سے ریٹائر ہونے جا رہا تھا، اس وقت سابق وزیراعظم پر کڑا وقت ہے،ساتھ چھوڑنا غداری ہو گی۔

اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے عوامی مسلم لیگ کے سربراہ نے کہا کہ ہماری کسی ادارے سے کوئی لڑائی نہیں ہے مگر جس طرح پی ٹی آئی چیئر مین کو دیوار سے لگایا گیا وہ غلط ہے، ہر آدمی یہ سمجھتا ہے عمران خان سے زیادتی ہوئی ہے، میں کوشش کررہا ہوں کہ ان کو واپس لایا جائے۔

شیخ رشید نے کہا کہ ملک کی سیاسی صورتحال کو شدیدخطرات ہیں، موجودہ صورتحال میں خاموش تماشائی بن کرنہیں رہا جاسکتا، سب کو واضح طور پر کہہ رہا ہوں اگر عمران خان نہیں ہےتو پھر آپ بھی نہیں ہونگے، تم لوگ ہمیں سلیکٹڈ کہتے تھے اور اب خود امپورٹڈ ہوگئے ہو۔

مسجدنبوی ﷺ واقعے پر عوامی مسلم لیگ کے سربراہ کا کہنا تھا کہ مسجدنبوی ﷺمیں جو کچھ ہوا نہیں ہونا چاہیے تھا مگر ان لوگوں کی شکلوں سے ہی لوگ نفرت کرتے ہیں، یہ لندن یا دنیا میں کہیں جائیں گے تو ان کو انڈے، ٹماٹر پڑیں گے پہلے سے خبردار کررہا ہوں بعد میں نہ کہنا کہ شیخ رشید نے ایسا بولا تھا۔

شیخ رشید کا مزید کہنا تھا کہ میں اردو میڈیم ہوں، مداخلت اور ساز ش میں کیا فرق ہے؟ اچھی طرح جانتا ہوں، میرے نزدیک مداخلت سازش سےبھی زیادہ خطرناک ہے۔