تازہ ترین
  • بریکنگ :- 25 مئی کو 3 بجےسری نگرہائی وے پرملوں گا،عمران خان
  • بریکنگ :- ہرمکتبہ فکرکےلوگ لانگ مارچ میں شرکت کریں،عمران خان
  • بریکنگ :- اسمبلیوں کی تحلیل اورشفاف الیکشن کی تاریخ چاہیے،عمران خان
  • بریکنگ :- اسمبلی تحلیل اورالیکشن کی تاریخ ملنےتک اسلام آباد رہیں گے،عمران خان
  • بریکنگ :- بیوروکریسی نےغیرقانونی کارروائی کی توایکشن لیں گے ،عمران خان
  • بریکنگ :- فوج کوکہتاہوں آپ نیوٹرل ہیں،نیوٹرل ہی رہیں،عمران خان
  • بریکنگ :- ہم نےجیل سےنہیں ڈرنا،جان کی قربانی دینی ہے،عمران خان
  • بریکنگ :- باربارکہا جاتاہے جان کو خطرہ ہے،کوئی خطرہ نہیں،عمران خان
  • بریکنگ :- ہم جان کی قربانی دینے کیلئے تیارہیں،عمران خان
  • بریکنگ :- غلام بننے سے بہتر موت قبول ہے،عمران خان
  • بریکنگ :- ہم چوروں کو کبھی تسلیم نہیں کریں گے،عمران خان
  • بریکنگ :- خوف ہےیہ لوگ پٹرول ،ڈیزل ،انٹرنیٹ بندکردیں گے،عمران خان
  • بریکنگ :- انٹرنیٹ،پٹرول ،ٹرانسپورٹ بندہو گی،پہلےسےتیاری رکھیں،عمران خان
  • بریکنگ :- تحریک انصاف کا 25 مئی کو لانگ مارچ کا اعلان

ملک میں احتجاج کے دوران رکشے کو آگ لگانے کی جعلی تصویر شیئر کی جانے لگی

Published On 16 April,2021 10:48 pm

لاہور: (ویب ڈیسک) سوشل میڈیا کی مشہور ویب سائٹ فیس بک پر پر ایک تصویر تیزی سے وائرل ہو رہی ہے جس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ ملک یں رواں کے دوران مذہبی جماعت کی طرف سے احتجاج کے دوران موٹر سائیکل رکشے کو جلا دیا گیا، یہ تصویر جعلی ہے۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق سوشل میڈیا کی مشہور ویب سائٹ فیس بک پر ایک تصویر 13 اپریل 2021ء کو اپ لوڈ کی گئی، جسے اب تک 500 سے زائد مرتبہ شیئر کیا جا چکا ہے۔

شیئر کی گئی تصویر کے کیپشن میں لکھا ہے کہ ایک غریب کے رکشے کو جلا دلایا گیا ہے۔

اے ایف پی کے مطابق یہ تصویر ایک ایسے وقت میں شیئر کی گئی جب ملک بھر میں مذہبی جماعت کی طرف سے احتجاج کیا جا رہا تھا۔ اس تصویر کو فیس بک پر متعد لوگوں نے شیئر کیا، یہاں بتاتے چلیں یہ تصویر جعلی ہے، کیونکہ ہماری تحقیق کے بعد پتہ چلا کہ یہ تصویر رواں ماہ کی نہیں بلکہ نومبر 2018ء کی ہے۔

اے ایف پی کے مطابق 1 یکم 2018ء کو فیس بک پر ایک تصویر دکھائی گئی جس میں رکشے کو جلایا گیا تھا، یہ کوئی اور مظاہرہ تھا۔ نیچے سکرین شاٹ دیکھا جا سکتا ہے کہ پرانی تصویر کو نئے کیپشن کے ساتھ شیئر کیا جا رہا ہے۔

اے ایف پی کے مطابق 6 نومبر 2018ء کو یہ تصویر پاکستان کے مقامی میڈیا پر بھی شیئر کی گئی تھی۔ سابق چیف جسٹس جسٹس میاں ثاقب نثار نے ملک میں احتجاج کے دوران ٹرانسپورٹرز کو نقصان پہنچانے پر ایک نوٹس لیا تھا۔ اس وقت تین روز کا احتجاج ہو رہا تھا اور متعدد گاڑیوں کو نقصان بھی پہنچایا گیا تھا۔