تازہ ترین
  • بریکنگ :- آج میڈیا کے سامنے وزیر بلدیات نے ہمارے مطالبات تسلیم کیے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- ہم اس معاہدے پر عمل بھی کروائیں گے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:صوبائی فنانس کمیشن کے قیام پر رضامندہیں،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- مئیر اور ٹاؤن چیئرمین کمیشن کے ممبر ہوں گے،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- سندھ حکومت تعلیمی ادارے اور اسپتال بلدیہ کو واپس کرنے پر تیار،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- آکٹرائے اور موٹر وہیکل ٹیکس میں سےبھی بلدیہ کراچی کو حصہ ملے گا،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- کراچی: مئیر کراچی واٹر بورڈ کے چیئرمین ہوں گے،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- بلدیہ کو خود مختار بنانے کیلئےمالی وسائل دینےپر سندھ حکومت تیار، ناصر حسین
  • بریکنگ :- کراچی: بلدیاتی قانون پر جماعت اسلامی اور سندھ حکومت کے مذاکرات کامیاب
  • بریکنگ :- سندھ حکومت اور جماعت اسلامی کےدرمیان تحریری معاہدہ
  • بریکنگ :- جماعت اسلامی کا دھرنا ختم کرنے کا اعلان،کارکنان گھروں کو روانہ
  • بریکنگ :- پیپلز پارٹی اور جماعت اسلامی میئر کراچی کو بااختیار بنانےپر متفق
  • بریکنگ :- آپ کو تاریخی جدوجہد کرنے پرمبارکباد پیش کرتا ہوں،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- آپ نے ساڑھے تین کروڑ عوام ہی نہیں پورے ملک کو حیران کردیا،حافظ نعیم
  • بریکنگ :- ہم استقامت کے ساتھ 29 دن دھرنے پر بیٹھے رہے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:سندھ حکومت اور جماعت اسلامی نے مل کر ایک مسودہ بنایا ہے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:2021 کا ترمیمی بل اب ختم ہو جائےگا،حافظ نعیم الرحمان

پاکستان اور ایف اے ٹی ایف میں مذاکرات 17 فروری سے شروع ہونگے

Last Updated On 10 February,2019 12:53 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) پاکستان اور فنانشل ایکشن ٹاسک فورس میں مذاکرات کا آغاز 17 فروری سے ہوگا۔ پاکستان کالعدم تنظیموں کے خلاف اقدامات اور جعلی بینک اکائونٹس میں اب تک ہونے والی کارروائی کے حوالے سے بریفنگ دے گا۔

پاکستان اور فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے درمیان پیرس مذاکرات 22 فروری تک جاری رہیں گے، وزارت خزانہ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ سیکریٹری خزانہ عارف خان پاکستانی وفد کی سربراہی کریں گے۔

پاکستان ایف اے ٹی ایف کو ایشیا پیسفک گروپ سے بات چیت پر بریفنگ دے گا، منی لانڈرنگ کی روک تھام کے لیے اقدامات سے آگاہ کیا جائے گا، جعلی بینک اکاؤنٹس کے خلاف کارروائی پر بھی بریفنگ دی جائے گی۔

پاکستانی وفد مشکوک ٹرانزیکشن کے خلاف اقدامات پر عالمی ایجنسی کو اعتماد میں لے گا جبکہ کالعدم تنظمیوں کے اکاؤنٹس اور اثاثے منجمند کیے جانے کے حوالے سے نئی پابندیوں سے متعلق آگاہی دی جائے گی۔