تازہ ترین
  • بریکنگ :- جب حق کی بات کرتےہیں توکہتےہیں آپ کاسیاست میں کیا کام،فضل الرحمان
  • بریکنگ :- عمران خان کبھی کہتےہیں چین جیسا نظام لےکرآئیں گے،فضل الرحمان
  • بریکنگ :- کبھی ایران جیساانقلاب توکبھی ریاست مدینہ کی بات کرتےہیں،فضل الرحمان
  • بریکنگ :- عمران خان کی حکومت بیرونی ایجنڈےپرعمل پیراہے،مولانافضل الرحمان
  • بریکنگ :- ہمیں معلوم ہےآپ آئین کےساتھ کس طرح مذاق کررہےہیں،فضل الرحمان
  • بریکنگ :- لسبیلہ: پی ٹی آئی حکومت نے معیشت تباہ کردی،مولانا فضل الرحمان
  • بریکنگ :- عمران خان کہتےہیں مجھےنکالاتوخطرناک بن جاؤں گا،فضل الرحمان
  • بریکنگ :- لسبیلہ: ہمیں آپ سے کوئی خطرہ نہیں،مولانا فضل الرحمان
  • بریکنگ :- آپ کوپہلےبھی کچھ نہیں سمجھااب بھی کچھ نہیں سمجھتے،فضل الرحمان

کوئٹہ دھماکا: وزیراعظم کی وزارت داخلہ کو معاملے کی ہر پہلو سے تفتیش کی ہدایت

Published On 22 April,2021 10:41 am

اسلام آباد: (دنیا نیوز) وزیراعظم نے کوئٹہ دھماکے کی شدید مذمت کرتے ہوئے وزارت داخلہ کو معاملے کی ہر پہلو سے تفتیش اور تہہ تک پہنچنے کی ہدایت کر دی۔ ترجمان وزیراعظم آفس کے مطابق عمران خان رات گئے تک معاملات کی خود نگرانی کرتے رہے۔

ادھر وزیراعظم عمران خان نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ کوئٹہ میں بزدلانہ دہشتگرد حملے میں بے گناہ جانوں کے ضیاع پر غم ہے، ہماری قوم نے دہشتگردی کو شکست دینے کیلئے بڑی قربانیاں دیں، دہشتگردی کی اس لعنت کو دوبارہ سے اٹھنےنہیں دیں گے، تمام داخلی اور بیرونی خطرات سے چوکس ہیں۔

کوئٹہ میں جناح روڈ پر ہوٹل کی پارکنگ میں دھماکے سے پولیس اہلکار سمیت 5 افراد جاں بحق جبکہ 11 زخمی ہوئے، جنہیں ہسپتال منتقل کر دیا گیا، جن میں سے 6 کی حالت تشویشناک ہے۔ زخمیوں میں اسسٹنٹ کمشنر اور اسسٹنٹ ریونیو بھی شامل ہیں۔

دھماکے کے بعد بم ڈسپوزل کی ٹیم موقع پر پہنچی اور شواہد اکٹھے کرلیے۔ حکام کے مطابق دھماکے میں 40 سے 50 کلو مواد استعمال کیا گیا جو گاڑی میں نصب کیا گیا تھا۔

وزیر داخلہ بلوچستان ضیا لانگو کا کہنا ہے کہ دشمنوں کی ہمیشہ کوشش رہی ہے کہ بدامنی پھیلائی جائے، ماضی میں بھی ایسے واقعات میں بھارت کے براہ راست ملوث ہونے کے ثبوت ملتے رہے ہیں۔ ڈی آئی جی اظہر اکرم نے کہا کہ ملزمان کو جلد کٹہرے میں لائیں گے۔

علاوہ ازیں ترجمان بلوچستان حکومت لیاقت شاہوانی نے کہا کہ دھماکا دہشت گرد حملہ ہے جس کی تمام پہلوؤں سے تحقیقات کی جا رہی ہیں۔ گورنر بلوچستان امان اﷲ خان یاسین زئی، وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید، بلاو ل بھٹو، مریم نواز، صوبائی وزیر داخلہ ضیا اﷲ لانگو، صوبائی سیکرٹری اطلاعات بشریٰ رند سمیت دیگر اہم شخصیات نے واقعہ کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔