تازہ ترین
  • بریکنگ :- عدم اعتماد جمع ہونے سے پہلے ملک ترقی کررہا تھا،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- پاکستان کی ایکسپورٹ میں اضافہ ہورہا تھا،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- ساڑھے 3 سال کے دوران بڑے چیلنجزکا سامنا کیا،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- کوروناکےدوران انڈسٹری اورلوگوں کے روزگارکوبچایا،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- ساڑھے 3سال میں 55 لاکھ نئےروزگارکےمواقع پیدا ہوئے،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- کوروناسےبھارت،برطانیہ کی معیشت منفی گروتھ میں گئی،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- کورونا کے باوجود پاکستان کی گروتھ 6 فیصد ہوئی،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- کورونا کےباوجودزرعی پیداوارمیں بھی اضافہ ہوا،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- بیرونی سازش ایبسلوٹلی ناٹ سے شروع ہوئی،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- شہبازشریف کواچھےایڈمنسٹریٹرکےطورپرپیش کیا گیا،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- شہبازشریف بدترین ایڈمنسٹریٹرثابت ہوئے،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- گھی کی قیمت میں 150روپےفی کلواضافہ ہوچکا ،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- بجلی کا فی یونٹ 16سے 36 روپےتک پہنچ گیا ،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- ہماری حکومت نےگیس کےریٹ نہیں بڑھائےتھے،فرخ حبیب

نور عالم اور طاہر صادق قومی اسمبلی میں اپنی ہی حکومت پر برس پڑے

Published On 22 June,2021 06:10 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے ایم این اے نور عالم اور ایم این اے میجر ریٹائرڈ طاہر صادق قومی اسمبلی میں اپنی ہی حکومت پر برس پڑے۔

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے حکومتی ایم این اے نے کہا کہ اپوزیشن کوخوش کرنے کے لیے بات نہیں کرتا، آئینہ دکھاتا ہوں۔ میرا تعلق پی ٹی آئی سے ہے، احساس پروگرام کی بجائے بجلی، ڈیزل سستا کرلیتے تاکہ غریب کوفائدہ پہنچتا، بدقسمتی سے لوگوں کوبھکاری بنایا جارہا ہے۔

 نور عالم کا کہنا تھا کہ جب میں نے مہنگائی کے خلاف بات کی تومیرے پیچھے بھی نیب کوبھجوادیا گیا، آئینہ دکھارہا ہوں یہ کوئی گناہ نہیں، کرپشن کی بات ہورہی ہے توبلاتفریق احتساب ہونا چاہیے، کرپشن اگرکسی نے کی ہے توکسی کی بلیک میلنگ میں نہیں آنا چاہیے۔

ان کا کہنا تھا کہ بجٹ کے دوران افسوسناک واقعہ پیش آیا، ایک دوسرے پرکتابیں پھینکی گئیں، ایک دوسرے کوماں، بہنوں کی گالیاں دینا افسوس کی بات ہے، چوتھے دن حکومت اوراپوزیشن والے لائن میں آگئے۔

نور عالم کا کہنا تھا کہ مہنگائی، لوڈشیڈنگ پربات کرتا ہوں تومجھ پرتنقید ہوتی ہے، عزت اوررزق اللہ دیتا ہے، پرسنیلٹی پرنہیں پاکستان کے آئین پریقین رکھتا ہوں، بدقسمتی سے حکومت والے عمران خان،اپوزیشن والے نوازشریف، آصف زرداری کے خلاف بات نہیں سن سکتے۔

بات کو جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ایوان میں کسی کوعوام کی فکرنہیں، ایوان میں ہمیں عوام نے بھیجا ہوا ہے، لوڈشیڈنگ ہوتی تھی اورہوتی رہے گی، جب ووٹ لینے جاتے ہیں تواس وقت ان کوووٹ چوری نظرنہیں آتی، وزرا صاحبان کودل،گردہ بڑا کرنا چاہیے۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں حقائق پربات کرتا ہوں، پیپلزپارٹی، (ن) لیگ، پی ٹی آئی سمیت سب وزرائے خزانہ کہتے آئے پچھلے برباد کر گئے میں صیح کر رہا ہوں، ادویات کی قیمتیں دگنا ہوچکی ہیں، بیگم کا خرچہ بھی دگنا ہوچکا ہے، پندرہ سے20ہزارکمانے والا اپنے خرچے پورے نہیں کرسکتا۔

اُدھر میجر ریٹائرڈ طاہر صادق نے کہا کہ دو سپیشل سسٹنٹ زیادہ ہی سپیشل ہیں، مجھے سمجھ نہیں آتا ان میں کیا سپیشل ہے، مجھ سے عناد ہے تو میرے ساتھ سکور برابر کرو، غریبوں کو مت نقصان دو، وزیر اعظم ملک میں مثبت تبدیلی چاہتے ہیں تو "لگڑ کلب،" کو فارغ کرنا پڑے گا۔

انہوں نے بجٹ پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ بجٹ میں زراعت کیلئے صرف 12ارب رکھے گئے ہیں، ملک میں مہنگائی 100فیصد بڑھی، کرپشن بہت بڑھی ہے، کرپشن پر پکڑے افسران کو ایک جگہ سے ٹرانسفر کر کے دوسری جگہ لگا دیا گیا، ان پڑھ ایم این ایز کیلئے خصوصی کلاس کا اہتمام کیا جائے۔