تازہ ترین
  • بریکنگ :- 24 گھنٹےمیں کوروناکےمزید 7586 کیس رپورٹ،این سی اوسی
  • بریکنگ :- ملک بھرمیں کورونامریضوں کی تعداد 13لاکھ 67 ہزار 605 ہوگئی
  • بریکنگ :- ملک میں کوروناکےایکٹوکیسزکی تعداد 70 ہزار 263 ہوگئی،این سی اوسی
  • بریکنگ :- ملک بھرمیں 24 گھنٹےکےدوران کوروناسےمزید 20 اموات
  • بریکنگ :- ملک بھرمیں کوروناسےجاں بحق افرادکی تعداد 29 ہزار 97 ہوگئی
  • بریکنگ :- 24 گھنٹےمیں کوروناکے 647 مریض صحت یاب،این سی اوسی
  • بریکنگ :- کوروناسےصحت یاب افرادکی مجموعی تعداد 12 لاکھ 68 ہزار 245 ہوگئی
  • بریکنگ :- 24 گھنٹےکےدوران 58 ہزار 334 کوروناٹیسٹ کیےگئے
  • بریکنگ :- ملک بھرمیں 2 کروڑ 45 لاکھ 32 ہزار 952 کوروناٹیسٹ کیےجاچکے
  • بریکنگ :- کوروناسےمتاثر 1083 مریضوں کی حالت تشویشناک،این سی اوسی
  • بریکنگ :- پنجاب 4 لاکھ 62 ہزار 323،سندھ میں 5 لاکھ 23 ہزار 774 کیسز
  • بریکنگ :- خیبرپختونخواایک لاکھ 84 ہزار 455،بلوچستان میں 33 ہزار 910 کیس رپورٹ
  • بریکنگ :- اسلام آبادایک لاکھ 17 ہزار 436،گلگت بلتستان میں 10 ہزار 489 کیسز
  • بریکنگ :- آزادکشمیرمیں کورونامریضوں کی تعداد 35 ہزار 218 ہوگئی،این سی اوسی
  • بریکنگ :- ملک میں کورونامثبت کیسزکی شرح 13 فیصدرہی،این سی اوسی

روی شاستری نے عمران خان کو دنیا کے بہترین کپتانوں میں سے ایک قرار دیدیا

Published On 04 September,2021 05:19 pm

لاہور: (ویب ڈیسک) سابق بھارتی کرکٹر روی شاستری نے پاکستان کے وزیراعظم اور 1992ء ورلڈکپ کے ہیرو عمران خان کو دنیا کے بہترین کپتانوں میں سے ایک قرار دیدیا۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق بھارت کے موجودہ کوچ نے اپنی کتاب ’’سٹار گیزنگ‘‘ میں لکھا کہ اس بات کو ثابت کرنے کیلیے کسی چیز کی ضرورت نہیں، ریکارڈ گواہی دے رہے ہیں، جو بھی عمران خان کیخلاف کھیل چکا، وہ بطور کپتان، کھلاڑی اور آل راؤنڈر ان کے قد کاٹھ کو جانتا ہے۔

ایک واقعہ بیان کرتے ہوئے انہوں نے لکھا کہ انڈر25 ٹیم کیخلاف میچ میں عمران خان ٹریفک مسائل کی وجہ سے تاخیر سے آئے اور فوری طور پر باؤلنگ شروع کرنا چاہتے تھے، بطور کپتان میں نے اعتراض کیا کہ قانون کے مطابق وہ ایسا نہیں کرسکتے، انہوں نے وسیم اکرم اور دیگر باؤلرز سے کہا کہ باؤنسرز سے اس کا امتحان لو۔

اپنی کتاب میں انہوں نے ایک جگہ پر لکھا کہ شارجہ میں ایک انٹرنیشنل میچ کے دوران بھارت اچھی پوزیشن میں تھا کہ مجھے کریمپس پڑ گئے، رنر منگوانے کیلیے کہا تو عمران خان نے انکار کردیا، مجھے اندازہ ہوگیا کہ کپتان ماضی کا واقعہ نہیں بھولے اور بدلہ اتار دیا،میں جلد ہی آؤٹ ہوگیا اور ٹیم اچھا ٹوٹل نہ بنا سکی، عمران خان میدان میں کسی کو معاف نہیں کرتے تھے، باہر بھی خاموش لیکن حریف کھلاڑیوں سے دوستانہ تعلقات رکھتے تھے۔