تازہ ترین
  • بریکنگ :- پاک آرمی رائفل ایسوسی ایشن کے41ویں مقابلےاختتام پذیر
  • بریکنگ :- آرمی چیف کی بطورمہمان خصوصی تقریب میں شرکت،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- تقریب کاانعقادجہلم گیریژن میں کیاگیا،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- میگاشوٹنگ ایونٹ 26اکتوبرسےیکم دسمبرتک منعقدہوا
  • بریکنگ :- مقابلوں میں آرمی،نیوی اورایئرفورس کےنشانہ بازوں نےحصہ لیا
  • بریکنگ :- آرمی چیف نےنمایاں کارکردگی دکھانےوالوں میں انعامات تقسیم کیے
  • بریکنگ :- سول آرمڈفورسزاورشہریوں سمیت 2500سےزائدنشانہ بازوں کی شرکت
  • بریکنگ :- انٹرفارمیشنزمقابلوں میں ملتان کورپہلےاورمنگلاکوردوسرےنمبرپررہی
  • بریکنگ :- انٹرسروسزمیچوں میں پاک فوج نےتمام مقابلےجیت لیے
  • بریکنگ :- دیگرمقابلوں میں پنجاب رینجرزپہلے،گلگت بلتستان اسکاؤٹ دوسرےنمبرپر
  • بریکنگ :- آرمی چیف نےمارکس مین شپ میں اعلیٰ مہارتوں کےمظاہرےکوسراہا
  • بریکنگ :- ایک جوان کی شوٹنگ مہارت اس کاطرہ امتیازہے،آرمی چیف
  • بریکنگ :- بنیادی فوجی تربیت میں شوٹنگ مہارت مرکزی حیثیت رکھتی ہے،آرمی چیف

افغانستان میں خاتون کھلاڑی کے سر قلم کی خبریں جعلی،بھارتی میڈیا نے غلطی مان لی

Published On 22 October,2021 11:43 pm

لاہور:(ویب ڈیسک)بھارتی میڈیا کے بارے اگر یہ کہا جائے کے وہ جعلی خبریں پھیلنے کے حوالے سے دنیا بھر میں سر فہرست ہے تو یہ بے جا نہ ہوگا لیکن اب انڈین میڈیا کی جانب سے افغانستان میں خاتون والی بال کھلاڑٰی کے طالبان کی جانب سے سر قلم کئے جانے کی خبر کو جعلی قرار دیتے ہوئے اپنی غلطی کا اعتراف کرلیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ 20اکتوبر کویہ خبر پوری دنیا میں پھیلائی گئی تھی کہ افغان خاتون والی بال کھلاڑی کا سر قلم کر دیا گیا،یہ دعویٰ کیا گیا کہ طالبان نے افغانستان کی جونیئر قومی والی بال خاتون کھلاڑی ماہ جبین حکیمی کا سر قلم کیا ہے۔

خاتون کھلاڑی کے قتل کے حوالے سے اب بھارتی میڈیا نے ہی ان خبروں کو جعلی قرار دیتے ہوئے رپورٹ کیا ہے کہ میڈیا نے افغان خواتین والی بال کھلاڑی کے طالبان کی جانب سے سر قلم کئے جانے کی خبر غلط دی۔

کئی سوشل میڈیا صارفین نے ماہ جبین حکیمی کی موت کے بارے میں میڈیا رپورٹس پر سوال اٹھائے۔ انہوں نے نشاندہی کی کہ خاتون کھلاڑی اگست کے پہلے ہفتے میں طالبان کی جانب سے کابل کا کنٹرول سنبھالنے سے پہلے انتقال کرگئی تھیں۔

بھارتی صحافی دیپا پیرنٹ کی جانب سے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پرلکھا گیا کہ انہوں نے حکیمی کے اہل خانہ سے بات کی جنہوں نے کھلاڑی کی موت کی خبرکو "گمراہ کن" قرار دیا۔

ٹویٹر صارف ریحانہ ہاشمی نے ماہ جبین کو ذاتی طور پر جاننے کا دعویٰ کرتے ہوئے افغانستان کے صحافی حسینی کو جواب دیا اور کہا کہ خاتون کھلاڑی افغان نیشنل آرمی کمانڈو کی رکن تھیں اور طالبان کے کابل پر قبضہ سے 10 روز قبل اس کے سسرال والوں کی جانب سے ان کو قتل کر دیا گیا تھا۔

ایک کمنٹ میں لکھا گیا کہ آپ کی پیاری بہن کی موت پر میری دلی تعزیت۔جبکہ سکندر حکیمی نے 9 اگست کو ماہ جبین کی تصویر کے ساتھ کیپشن لکھا کہ پیاری بہن مجھے ہمیشہ آپ پر فخر رہے گا۔