تازہ ترین
  • بریکنگ :- الیکشن کمیشن نے 150 ارکان پارلیمنٹ کی رکنیت معطل کردی
  • بریکنگ :- اسلام آباد: رکنیت گوشوارے جمع نہ کرانے پر معطل کی گئی
  • بریکنگ :- قومی اسمبلی 36،سینیٹ 3،پنجاب اسمبلی کے 69 ارکان کی رکنیت معطل
  • بریکنگ :- سندھ اسمبلی 14،خیبرپختونخوا اسمبلی کے 21 ارکان کی رکنیت معطل
  • بریکنگ :- بلوچستان اسمبلی کے 7 ارکان کی رکنیت بھی معطل کردی گئی
  • بریکنگ :- نورالحق قادری،فرخ حبیب،حماداظہر،شفقت محمودکی رکنیت معطل
  • بریکنگ :- فہمیدہ مرزا،عامرلیاقت،راجہ ریاض،صداقت عباسی،خالدمقبول صدیقی شامل
  • بریکنگ :- رکن پنجاب اسمبلی اویس لغاری کی رکنیت معطل
  • بریکنگ :- الیکشن کمیشن نےیارمحمدرندکی رکنیت معطل کردی
  • بریکنگ :- معطل ارکان اسمبلی وسینیٹ اجلاسوں میں شرکت نہیں کرسکیں گے،الیکشن کمیشن
  • بریکنگ :- معطل ارکان کسی بھی قانون سازی میں شریک نہیں ہوں گے،الیکشن کمیشن

وفاقی کابینہ نے اسلام آباد میں بلدیاتی انتخابات کرانے کی منظوری دے دی

Published On 23 November,2021 05:11 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت ہونے والی وفاقی کابینہ کے اجلاس میں اسلام آباد میں بلدیاتی انتخابات کرانے کی منظوری دے دی گئی۔

وفاقی کابینہ اجلاس میں 13 نکاتی ایجنڈے پر غور ہوا، متعدد نکات کی منظوری دی گئی، اجلاس میں ملک کی سیاسی و معاشی اور امن اور امان کی صورتحال پر غور کیا گیا۔

وفاقی کابینہ کو مہنگائی سے نمٹنے کے لئے حکومتی اقدامات پر بریفنگ دی گئی، اجلاس کے دوران سندھ حکومت کے اقدامات پر سخت تنقید کی گئی۔وزراء نے رائے دیتے ہوئے کہا کہ سندھ حکومت کی ہٹ دھرمی اور نا اہلی کے باعث مہنگائی میں اضافہ ہوا۔

وزیراعظم کو بریفنگ دی گئی کہ دیگر صوبوں کی نسبت سندھ میں آٹا، چینی اور اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں زیادہ اضافہ ہوا، خیبر پختون خواہ اور پنجاب میں مہنگائی کو کافی حد تک کنٹرول کیا جا رہا ہے۔

ذرائع کے مطابق وفاقی کابینہ نے اسلام آباد میں بلدیاتی انتخابات کرانے کی منظوری دیدی، بلدیاتی انتخابات کے حوالے سے الیکشن کمیشن جلد شیڈول جاری کرے گا، وفاقی کابینہ نے تمام صوبوں کی جانب سے سروے آف پاکستان کو ڈیٹا دینے کے فیصلے کی منظوری دے دی۔ صوبے وفاقی حکومت کو زمین کا ریکارڈ دینے کے پابند ہوں گے۔

اس موقع پر وزیراعظم کا کہنا تھا کہ قبضہ مافیا نے کھربوں روپے کی مالیت پر قبضہ کر رکھا تھا، قبضہ مافیا سے جنگلات اور سرکاری اراضی کو واگزار کروایا جائیگا۔