تازہ ترین
  • بریکنگ :- شہبازگل نےجوبیان دیاوہ دہرانابھی قومی مفادمیں نہیں،راناثنااللہ
  • بریکنگ :- پاک فوج کےڈسپلن کی پوری دنیا قائل ہے،وزیرداخلہ راناثنااللہ
  • بریکنگ :- سانحہ لسبیلہ کےحوالےسےسوشل میڈیاپرپروپیگنڈاکیاگیا،راناثنااللہ
  • بریکنگ :- خاص طورپرفوج کےرینکس کوپکاراگیا،وزیرداخلہ راناثنااللہ
  • بریکنگ :- ان کرداروں کی حقیقت مزیدتحقیقات کے بعد سامنے آئے گی،رانا ثنا اللہ
  • بریکنگ :- سازشی کردارانکوائری میں سامنےآئیں گے،وزیرداخلہ راناثنااللہ
  • بریکنگ :- سازش میں ملوث کرداروں کیخلاف قانون کے مطابق کارروائی ہوگی،راناثنااللہ
  • بریکنگ :- اسلام آباد:ریاست کی مدعیت میں مقدمہ درج کیا گیا ،رانا ثنا اللہ
  • بریکنگ :- تھانہ کوہساراسلام آباد میں مقدمہ درج کیاگیا،راناثنااللہ
  • بریکنگ :- مقدمےمیں دفعات 505،120بی،153اے،124اے،131 شامل،راناثنااللہ
  • بریکنگ :- شہبازگل کوقانون کے مطابق گرفتارکیا گیا،رانا ثنا اللہ
  • بریکنگ :- شہبازگل کوکل عدالت میں پیش کریں گے،رانا ثنا اللہ
  • بریکنگ :- عمران خان کہہ رہے ہیں کہ شہبازگل کواغواکیاگیاہے،راناثنااللہ
  • بریکنگ :- اغوا نہیں باقاعدہ مقدمہ درج کیا گیا ہے،وزیرداخلہ راناثنا اللہ
  • بریکنگ :- میں چاہتاتوشہبازگل کی گاڑی سے ہیروئن برآمدہوسکتی تھی،راناثنا اللہ
  • بریکنگ :- ہمارا ایسی شرمناک حرکتوں کاکوئی ارادہ نہیں،راناثنااللہ
  • بریکنگ :- عمران خان کویقین دلاتاہوں قانون کےمطابق سلوک ہوگا،راناثنااللہ
  • بریکنگ :- شیخ رشید چلاہواکارتوس ،انہیں گرفتارکرنےکی ضرورت نہیں،رانا ثنا اللہ

جسٹس قاضی فائز عیسی نظرثانی کیس کا تحریری فیصلہ جاری

Published On 29 January,2022 03:05 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) سپریم کورٹ نے جسٹس قاضی فائز عیسی نظرثانی کیس کا تحریری فیصلہ جاری کر دیا۔ سرینا عیسی کی نظرثانی درخواستیں اکثریت سے منظور کرلی گئی۔

سپریم کورٹ کے جسٹس مقبول باقر، جسٹس مظہرعالم، جسٹس منصورعلی شاہ اور جسٹس امین الدین نے فیصلہ تحریر کیا۔ فیصلے میں سرینا عیسی کی نظرثانی درخواستیں اکثریت سے منظور کرتے ہوئے کہا گیا کہ یہ فیصلہ واضع الفاظ کیساتھ سنایا جاتا ہے کہ ہر شہری اپنی زندگی، آزادی، ساکھ، جائیداد سے متعلق قانون کے مطابق سلوک کا حق رکھتا ہے، دوسری طرف کوئی بھی شخص چاہے وہ اس عدالت کو جج کیوں نہ ہو اس کو قانونی حق سے محروم نہیں کیا جا سکتا۔

تحریری فیصلے میں کہا گیا کہ آئین کے آرٹیکل 9 سے 28 تک ہر شہری کے بنیادی حقوق کا تحفظ کرتے ہیں، اگر کوئی شہری پبلک آفس ہولڈر ہے تو اسے بھی قانون کا تحفظ حاصل ہے، قطع نظر کسی عہدہ یا پوزیشن کے ہر پاکستان قانون کے مطابق سلوک کا حقدار ہے، دس رکنی لارجر بینچ نے چھ چار کے تناسب سے سرینا عیسی کے حق میں فیصلہ سنایا۔ جسٹس یحی آفریدی نے اضافی نوٹ تحریری کیا۔

سپریم کورٹ نے مختصر فیصلہ 26 اپریل 2021 کوسنایا تھا۔ 9 ماہ دو دن بعد نظرثانی درخواستوں کا تحریری فیصلہ جاری کیا گیا۔