تازہ ترین
  • بریکنگ :- ملک بھرمیں کورونا سے مزید3اموات،این آئی ایچ
  • بریکنگ :- 24گھنٹےکےدوران 20ہزار272ٹیسٹ کیے گئے،728کیسز رپورٹ
  • بریکنگ :- 161مریضوں کی حالت تشویشناک،مثبت کیسز کی شرح 3.59فیصد ریکارڈ

نومنتخب وزیراعلیٰ سے حلف لینے سے متعلق عدالتی حکم کیخلاف اپیل دائر کرنیکا فیصلہ

Published On 22 April,2022 04:15 pm

لاہور:(دنیا نیوز) نومنتخب وزیراعلیٰ سے حلف لینے سے متعلق عدالتی حکم، ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے سنگل بنچ کے خلاف انٹرا کورٹ اپیل دائر کرنے کا فیصلہ کرلیا۔

لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے پر ایڈووکیٹ جنرل پنجاب کا رد عمل سامنے آ گیا ہے، ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے سنگل بنچ کے خلاف انٹرا کورٹ اپیل دائر کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے کہا کہ صدر پاکستان کیس میں فریق نہیں تھے۔

انہوں نے کہا کہ صدر پاکستان کو کوئی حکم جاری نہیں کیا جا سکتا۔ 

صدر مملکت کو حمزہ شہباز سے حلف لینے کیلئے کوئی اور نمائندہ مقرر کرنیکا حکم

لاہور ہائیکورٹ نے مختصر فیصلہ سناتے ہوئے صدر مملکت کو نومنتخب وزیر اعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز سے حلف لینے کیلئے کوئی اور نمائندہ مقرر کرنے کا حکم دے دیا۔ عدالت نے کہا کہ گورنر پنجاب حلف لینے سے انکار نہیں کرسکتے، صدر پاکسان کسی اور کو حلف لینے کے لئے نامزد کریں، صدر پاکستان کو عدالتی فیصلے کی کاپی بھجوائی جائے۔

حمزہ شہباز سے حلف نہ لینے سے متعلق لاہور ہائیکورٹ میں دائر درخواست پر سماعت ہوئی۔ ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے عدالت کو بتایا کہ گورنر پنجاب کے ساتھ میٹنگ کی، دو، تین وجوہات عدالت کے سامنے رکھنا چاہتا ہوں، گورنر کے ساتھ اسپیکر اسمبلی حلف لینے کا پابند ہوتا ہے، حمزہ شہباز کی درخواست میں اسپیکر کو فریق نہیں بنایا گیا، گورنر کوئی ربڑ اسٹیمپ نہیں۔

چیف جسٹس نے ایڈووکیٹ جنرل سے استفسار کیا کہ گورنر پنجاب کی جانب سے حلف نہ لینے کا کوئی جواز ہے ؟ صدر نے کہا کہ میں وزیر اعظم سے حلف نہیں لے سکتا، بیمار ہوں۔ جس پر ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے کہا کہ گورنر پنجاب سمجھتے ہیں کہ وزیر اعلیٰ کا انتخاب قانون اور آئین کے مطابق نہیں ہوا، ایک خاتون ایم پی اے تشدد کی وجہ سے زندگی اور موت کی کشمکش میں ہے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ اس کا مطلب ہے سب کچھ روک دیا جائے۔

چیف جسٹس امیر بھٹی نے کہا کہ 21 دنوں سے پنجاب میں حکومت نہیں ہے، آپ کو اندازہ ہے صوبہ کیسے چل رہا ہے ؟ یہ الیکشن بھی جیسے ہوا سب کورٹ کے علم میں ہے، عدالت کے حکم پر چیف منسٹر کا الیکشن ہوا، جس طرح سے چیف منسٹر کے الیکشن میں تاخیری حربے استعمال کیے گئے سب پتہ ہے۔ ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے کہا کہ اس کیس کو پیر تک ملتوی کیا جائے۔ جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ کیوں مہلت دی جائے آپ کو ؟ آپ کے پاس تو اس کے علاؤہ کام ہی نہیں، گورنر پریس کانفرنس کر رہے ہیں تو کیا اس کیس کے لیے ٹائم نہیں ان کے پاس ؟۔