تازہ ترین
  • بریکنگ :- لاہور:عوام پرآج پٹرول بم بجلی بن کرگرا،مریم نواز
  • بریکنگ :- پٹرول مہنگاہونےسےآٹا،سبزیاں اوردیگراشیامہنگی ہوں گی،مریم نواز
  • بریکنگ :- لوگ آج بھی 20 ہزارمیں گزارہ کرتےہیں،سب بنی گالامیں نہیں رہتے،مریم نواز
  • بریکنگ :- لاہور:ہرایک کےپاس اےٹی ایم نہیں ہوتی،مریم نواز
  • بریکنگ :- ہرکسی کےپاس کچن چلانےوالےدوست نہیں ہوتے،مریم نواز
  • بریکنگ :- غریب عوام پس رہےہیں،عمران خان جوڑتوڑمیں مصروف ہیں،مریم نواز
  • بریکنگ :- نااہل اورنالائق حکومت نےعوام کی جیبوں پرڈاکاڈالا،مریم نواز
  • بریکنگ :- حکومت نےعوام کوصرف تکلیف اوردرد دیاہے،مریم نواز
  • بریکنگ :- حکومت خوداپنےخلاف لانگ مارچ کررہی ہے،مریم نواز
  • بریکنگ :- حکومت کی نااہلی،بےحسی،نالائقی سےڈینگی پھیل رہاہے،مریم نواز
  • بریکنگ :- لوگ جھولیاں اٹھاکرحکمرانوں کوبددعائیں دےرہےہیں،مریم نواز
  • بریکنگ :- لاہور:حکومت کا 9 سال کاپلان ناکام ہوگیا،مریم نواز
  • بریکنگ :- اس بےحس حکومت سےتوڈرامہ بھی نہیں ہورہا،مریم نواز
  • بریکنگ :- لاہور:ہم عوام کاایجنڈالےکرچل رہےہیں،مریم نواز

یوٹیوب نے ایک ہزار سے زائد سبسکرائبرز رکھنے والوں کو خوشخبری سنا دی

Published On 06 August,2021 10:58 pm

لاہور: (ویب ڈیسک) انٹرنیٹ کی سب سے مقبول ویڈیو شیئرنگ اور اسٹریمنگ ویب سائٹ یوٹیوب نے اپنے پلیٹ فارم پر نئے چینل بنانے والے صارفین کے لیے ایک نیا فیچر ’آن دی رائز ‘متعارف کرایا ہے۔

یوٹیوب نے ایک ہزار سے زائد سبسکرائبرز رکھنے والے چینلز کو مقبول بنانے کے لیے ایک پروگرام کے آغاز کا اعلان کیا ہے، اس پروگرام کے بعد چھوٹے یوٹیوبرز کو پلیٹ فارم پر مقبول ہونے کے لیے جدوجہد نہیں کرنی پڑے گی کیوں کہ یوٹیوب اب یہ ذمہ داری خود اٹھائے گا۔

یوٹیوب کی جانب سے جاری پریس ریلیز میں کہا گیا ہےکہ آج سے ہم ان تخلیق کاروں کو اجاگر کریں گے جو پاکستان میں ہمارے ٹرینڈنگ ٹیب کے ایک نئے سیکشن میں’ آن دی رائز‘ ہیں۔

پریس ریلیز کے مطابق ہر ہفتے ایک مختلف کریئٹر کو اجاگر کیا جائے گا اور ’کریئٹر آن دی رائز ‘بیج کے ساتھ پورا دن کریئٹر کو ٹرینڈنگ پر نمایاں کیا جائے گا۔ ایک ہزار سے زائد سبسکرائبرز رکھنے والا کوئی بھی کریئٹر پلیٹ فارم پر نمایاں ہونے کا اہل ہوگا۔

نئے فیچر آن دی رائز کے تحت کریئٹرز کو متعدد عوامل کی بنیاد پر نمایاں کیا جائے گا لیکن یہ عوامل ویوز، واچ ٹائم اور بڑھنے والے سبسکرائبرز کی حد سے بالاتر ہوں گے۔

یوٹیوب کا مزید کہنا ہے کہ مستقبل میں اس فیچر کو مزید زبانوں میں متعارف کروایا جائے گا۔