تازہ ترین
  • بریکنگ :- کراچی: بلدیاتی قانون پر جماعت اسلامی اور سندھ حکومت کے مذاکرات کامیاب
  • بریکنگ :- سندھ حکومت اور جماعت اسلامی کےدرمیان تحریری معاہدہ
  • بریکنگ :- جماعت اسلامی کا دھرنا ختم کرنے کا اعلان،کارکنان گھروں کو روانہ
  • بریکنگ :- آپ کو تاریخی جدوجہد کرنے پرمبارکباد پیش کرتا ہوں،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- آپ نے ساڑھے تین کروڑ عوام ہی نہیں پورے ملک کو حیران کردیا،حافظ نعیم
  • بریکنگ :- ہم استقامت کے ساتھ 29 دن دھرنے پر بیٹھے رہے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:سندھ حکومت اور جماعت اسلامی نے مل کر ایک مسودہ بنایا ہے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:2021 کا ترمیمی بل اب ختم ہو جائےگا،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- آج میڈیا کے سامنے وزیر بلدیات نے ہمارے مطالبات تسلیم کیے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- ہم اس معاہدے پر عمل بھی کروائیں گے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:صوبائی فنانس کمیشن کے قیام پر رضامندہیں،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- مئیر اور ٹاؤن چیئرمین کمیشن کے ممبر ہوں گے،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- سندھ حکومت تعلیمی ادارے اور اسپتال بلدیہ کو واپس کرنے پر تیار،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- آکٹرائے اور موٹر وہیکل ٹیکس میں سےبھی بلدیہ کراچی کو حصہ ملے گا،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- کراچی: مئیر کراچی واٹر بورڈ کے چیئرمین ہوں گے،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- بلدیہ کو خود مختار بنانے کیلئےمالی وسائل دینےپر سندھ حکومت تیار، ناصر حسین
  • بریکنگ :- کراچی: آج کے اعلان کیے گئے دھرنے بھی ختم کر دیئے ہیں،حافظ نعیم الرحمان

ایف اے ٹی ایف کا کالعدم تنظیموں‌ کی نگرانی، فنڈ ریزنگ روکنے کا مطالبہ

Last Updated On 28 March,2019 06:31 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) پاکستان اور فنانشل ایکشن ٹاسک فورس نے مذاکرات میں کہا ہے کہ پاکستان نے بینکوں کے ذریعے دہشت گردوں کو رقوم کی منتقلی روک لی مگر ضلعی سطح پر فنڈ ریزنگ کو روکنے کیلئے کچھ نہیں کیا گیا، وفد نے نئے قوانین کو درست مگر عملی اقدامات کو ناکافی قرار دیا۔

 ایف اے ٹی ایف اور پاکستان میں مذاکرات کے بعد عالمی ادارہ دہشت گردوں کی مالی معاونت روکنے کے عملی اقدامات سے غیرمطمئن ہے، انسداد منی لانڈرنگ قوانین اور نئے قوائد پر اظہار اطمینان تو کر دیا مگر پاکستان سے کالعدم تنظیموں اور کارندوں کی مسلسل نگرانی کا مطالبہ تاحال موجود ہے۔

ذرائع کے مطابق ایف اے ٹی ایف کے وفد نے مذاکرات کے دوران کہا کہ سٹیٹ بینک اور ایس ای سی پی کے اقدامات سے دہشت گردوں کی بینکوں کے ذریعے مالی معاونت رک گئی تاہم صوبوں اور اضلاع کی سطح پر ریلیوں اور تقاریب کے ذریعے فنڈ جمع کرنے کا سلسلہ جاری ہے، یہ فنڈ ریزنگ روکنے کے لئے انتظامی طورپر کچھ نہیں کیا گیا۔ کالعدم تنظیموں کیلئے نقد رقوم لے جانے والوں کی نقل و حرکت پر بھی نظر رکھی جائے۔

ایف اے ٹی ایف کا وفد تین روزہ دورے کے نتائج کا آج جائزہ لے گا، پاکستان کو گرے لسٹ سے نکالنے یا نہ نکالنے کا فیصلہ ستمبر میں کیا جائے گا۔