تازہ ترین
  • بریکنگ :- پاکستان میں کرپشن مزیدبڑھ گئی،ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل
  • بریکنگ :- پاکستان کرپشن رینکنگ میں 16درجےاوپرچلاگیا،ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل
  • بریکنگ :- کرپشن پرسیپشن انڈیکس میں پاکستان دنیامیں 140ویں نمبرپرآگیا،ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل
  • بریکنگ :- 2020میں پاکستان کانمبردنیامیں 124واں تھا،ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل
  • بریکنگ :- 2020میں کرپشن پرسیپشن انڈیکس میں پاکستان کااسکور 31تھا،ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل
  • بریکنگ :- 2021میں کرپشن پرسیپشن انڈیکس میں پاکستان کااسکور 28ہوگیا،ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل
  • بریکنگ :- کرپشن پرسیپشن انڈیکس میں اسکورکم ہوناکرپشن میں اضافےکوظاہرکرتاہے
  • بریکنگ :- ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل نے 180ممالک کاکرپشن پرسیپشن انڈیکس جاری کردیا

پٹرولیم مصنوعات: اپوزیشن نے ہوشربا اضافے کو ظلم قرار دیکر مسترد کر دیا

Last Updated On 26 June,2020 11:37 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھنے کے بعد ملکی اپوزیشن نے ہوشربا اضافے کو ظلم قرار دیکر مسترد کر دیا ہے۔

پاکستان مسلم لیگ ن کے صدر میاں محمد شہباز شریف نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے بعد ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ پٹرولیم قیمتوں میں ملکی تاریخ کا بلند ترین33 فیصد اضافہ دراصل ”چینی سکینڈل پارٹ ٹو‘ ہے۔

انہوں نے کہا کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں یہ اضافہ اس وقت کیاگیا جب ملک میں قلت ہے، حکومتی سرپرستی میں چینی کے بعد پٹرول مافیا کو عوام کو لوٹنے کا لائسنس دیاگیا، چینی کے بعد پٹرول مافیا جیت گیا، اور عوام ہار گئے۔

لیگی صدر کا کہنا تھا کہ یہ حکومت مافیاز کی سب سے بڑی حمایتی ثابت ہوئی، پٹرول کے معاملے بھی چینی چوری والی واردات دوہرائی گئی، پی ٹی آئی حکومت نے قوم کے ساتھ گھناؤنا کھیل کھیلا۔ 75 روپے قیمت کی تو پٹرول مارکیٹ سے غائب ہوگیا، کوئی خرید نہ سکا۔

یہ بھی پڑھیں: پٹرول ریکارڈ 25 روپے 58 پیسے مہنگا، قیمت ایک مرتبہ پھر سنچری کراس کر گئی

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ عمران نیازی کے عوام کی بہتری اور احساس کے دعوے کھوکھلے ثابت ہوئے ، مہنگائی کا سونامی غریبوں کو کھاجائے گا، ثابت ہوا کہ یہ ظالموں، بے احساسوں اور نااہلوں کی حکومت ہے، ظلم کی حکومت نہیں چل سکتی۔

ان کا کہنا تھا کہ حکومت نے ناکافی ریلیف کی عوام سے سود سمیت وصولی شروع کردی، کورونا کی دلدل میں دھنسی بے چاری قوم پر پٹرولیم قیمتوں میں تاریخی اضافے کا بم پھینک دیاگیا، حکومت نے بجٹ سے پہلے ہی منی بجٹ دے دیا ہے۔

لیگی صدر کا مزید کہنا تھا کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ ثبوت ہے، حکومت چاہتی ہی نہیں کہ معیشت چلے، عوام کا چولہا جلے ، ٹیکس وصولیوں میں بدترین ناکامی، تاریخی بلند ترین قرض، معیشت تباہ،ترقی کی شرح صفرہو چکی

یہ بھی پڑھیں: بلاول کے شہباز ، فضل الرحمن، شیر پاؤ سمیت دیگر رہنماؤں سے ٹیلیفونک رابطے

دوسری طرف پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو زرداری نے شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں غیرمعمولی اضافے کو مسترد کرتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ عوام کو مزید ریلیف دینے کے وقت پیٹرول مہنگا کرنا غریب دشمنی ہے، تاریخی اضافہ کرنے والے ماضی میں معمولی اضافوں پر تنقید کرتے رہے ہیں۔

پیپلز پارٹی کے چیئر مین کا کہنا تھا کہ عوام کی جیبوں پر ڈاکا ڈال کر عمران خان نااہلی کی وجہ سے ڈوبتی معیشت کو سہارا نہیں دے سکتے، پٹرول سستا کروا کر ذخیرہ کروایا اور پھر مہنگا کرکے عمران خان نے مافیا کو فائدہ پہنچایا۔

بات کو جاری رکھتے ہوئے بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ سلیکٹڈ وزیراعظم کو عام آدمی کی کوئی فکر نہیں، جب پیٹرول سستا کیا تو قلت پیدا کی گئی اور کم قیمتوں کے ثمرات بھی عوام تک نہ پہنچ سکے، پیٹرول سستا ہونے سے کچھ سستا نہیں ہوا تھا مگر مہنگا ہونے سے مزید مہنگائی ضرور ہوگی، یہی نیا پاکستان ہے۔

امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق کا رد عمل دیتے ہوئے کہنا تھا کہ ابھی بجٹ منظور بھی نہیں ہوا اور حکومت نے پٹرول کی قیمتیں بڑھا کر مہنگائی کا کوڑا برسا دیا۔

انہوں نے کہا کہ قیمتوں میں چند دن کی کمی اب عوام سے سود کے ساتھ موصول کی جائے گی، مافیا کو لگام ڈالنے کہ دعوے کرنے والا مافیا کے سامنے بے بس ہوگئے۔

سراج الحق کا کہنا تھا کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کر کے پورے ملک کو بند کرنے کی کوشش کی جارہی ہے، جماعت اسلامی پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ مسترد کرتی ہے، اگر قیمتیں بین الاقوامی قیمتوں کے حساب سے مقرر نہ کی گئیں تو جماعت اسلامی احتجاج کرے گی۔