آئی ایم ایف کی شرط پوری: بجلی کے بعد گیس بھی مہنگی

Published On 08 November,2023 04:47 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) کی ایک اور شرط پوری، بجلی کے بعد گیس بھی مہنگی ہو گئی، وفاقی حکومت کی منظوری کے بعد گیس کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا گیا۔

اوگرا نے گیس کی قیمتوں میں اضافے کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا، نئی قیمتوں کا اطلاق یکم نومبر سے ہو گا، نان پروٹیکٹڈ گھریلو صارفین کے لیے گیس کی قیمت میں 172 فیصد سے زائد اضافہ کیا گیا ہے۔

ماہانہ 25 مکعب میٹر گیس استعمال کرنے والے صارفین کےلیے نرخوں میں سو روپے فی ایم ایم بی ٹی یو اضافہ کیا گیا ہے، ماہانہ 25 مکعب میٹر استعمال کرنے والے گیس صارفین کے لیے قیمت 200 سے بڑھا کر 300 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو مقرر کی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: معاشی مشکلات، پاکستان میں تیل کے ذخائر میں 9 سال میں 50 فیصد کمی

ماہانہ 60 مکعب میٹر گیس استعمال کرنے والے صارفین کے لیے نرخوں میں 300 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو اضافہ کیا گیا، ماہانہ 60 مکعب میٹر استعمال کرنے والے گیس صارفین کے لیے قیمت 300 سے بڑھا کر 600 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو کر دی گئی۔

100 مکعب میٹر استعمال کرنے والے صارفین کے لیے گیس کے نرخوں میں 600 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو اضافہ کر دیا گیا، 100 مکعب میٹر استعمال کرنے والے صارفین کے لیے گیس کی قیمت 400 سے بڑھا کر 1000 روپے کر دی گئی۔

ماہانہ 150 مکعب میٹر استعمال پر گیس کی قیمت 600 سے بڑھا کر 1200، 200 مکعب میٹر گیس استعمال کرنے والے صارفین کے لیے نرخوں میں 800 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو اضافہ کیا گیا ہے، ماہانہ 200 مکعب میٹر گیس استعمال کرنے والے صارفین کیلئے گیس کی قیمت 800 سے بڑھا کر 1600 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو مقرر کر دی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: حکومتی گارنٹیوں کا بوجھ 3852 ارب روپے تک محدود ہو گیا

300 مکعب میٹر گیس استعمال کرنے والوں کے لیے نرخوں میں 1900 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو اضافہ کیا گیا ہے، ماہانہ 300 مکعب میٹر استعمال کرنے والوں کے لیے گیس کی قیمت 1100 سے بڑھ کر 3000 روپے کر دی گئی۔

400 مکعب میٹر گیس استعمال کرنے والے صارفین کے لیے نرخوں میں 15 سو روپے فی ایم ایم بی ٹی یو اضافہ کیا گیا ہے، 400 مکعب میٹر استعمال پر گیس کی قیمت 2000 سے بڑھا کر 3500 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو کر دی گئی، ماہانہ 400 مکعب میٹر سے زائد استعمال پر قیمت 3100 سے بڑھا کر 4000 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو کر دی گئی ہے۔

Advertisement