تازہ ترین
  • بریکنگ :- کراچی: بلدیاتی قانون پر جماعت اسلامی اور سندھ حکومت کے مذاکرات کامیاب
  • بریکنگ :- سندھ حکومت اور جماعت اسلامی کےدرمیان تحریری معاہدہ
  • بریکنگ :- جماعت اسلامی کا دھرنا ختم کرنے کا اعلان،کارکنان گھروں کو روانہ
  • بریکنگ :- کراچی: آج کے اعلان کیے گئے دھرنے بھی منسوخ کر دیئے ہیں،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- آپ کو تاریخی جدوجہد کرنے پرمبارکباد پیش کرتا ہوں،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- آپ نے ساڑھے تین کروڑ عوام ہی نہیں پورے ملک کو حیران کردیا،حافظ نعیم
  • بریکنگ :- ہم استقامت کے ساتھ 29 دن دھرنے پر بیٹھے رہے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:سندھ حکومت اور جماعت اسلامی نے مل کر ایک مسودہ بنایا ہے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:2021 کا ترمیمی بل اب ختم ہو جائےگا،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- آج میڈیا کے سامنے وزیر بلدیات نے ہمارے مطالبات تسلیم کیے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- ہم اس معاہدے پر عمل بھی کروائیں گے،حافظ نعیم الرحمان
  • بریکنگ :- کراچی:صوبائی فنانس کمیشن کے قیام پر رضامندہیں،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- مئیر اور ٹاؤن چیئرمین کمیشن کے ممبر ہوں گے،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- سندھ حکومت تعلیمی ادارے اور اسپتال بلدیہ کو واپس کرنے پر تیار،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- آکٹرائے اور موٹر وہیکل ٹیکس میں سےبھی بلدیہ کراچی کو حصہ ملے گا،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- کراچی: مئیر کراچی واٹر بورڈ کے چیئرمین ہوں گے،ناصر حسین شاہ
  • بریکنگ :- بلدیہ کو خود مختار بنانے کیلئےمالی وسائل دینےپر سندھ حکومت تیار، ناصر حسین

اینٹی منی لانڈرنگ قانون سازی فیٹف کی ضرورت ہے، وفاقی وزیر فروغ نسیم

Published On 27 August,2020 05:22 pm

اسلام آباد: (دنیا نیوز) وفاقی وزیر برائے قانون و انصاف بیرسٹر فروغ نسیم نے کہا ہے کہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے وضع کردہ معیار پر پورا اترنے کے لئے اینٹی منی لانڈرنگ قانون سازی کی ضرورت ہے۔

سرکاری میڈیا کے مطابق ایک انٹرویو کے دوران اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ یہ تجویز کرنا غلط ہے کہ منی لانڈرنگ کے معاملات میں بغیر وارنٹ گرفتاریاں ایف اے ٹی ایف کی ضرورت نہیں ہے۔

بیرسٹر فروغ نسیم کا کہنا تھا کہ ضابطہ فوجداری کے طریقہ کار (سی آر پی سی) کے مطابق متعدد جرائم ہیں جن کے لئے وارنٹ کے بغیر گرفتاری عمل میں لائی جا سکتی ہے۔ بغیر وارنٹ گرفتاری آئین کی خلاف ورزی نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ کچھ قابل شناخت جرائم ہیں جن میں پولیس کسی ملزم کو بغیر وارنٹ گرفتار کر سکتی ہے۔ کینیڈا اور امریکا جیسے ممالک میں بھی کچھ معاملات میں پوچھ گچھ کے لئے عدالت کو ملزم کی گرفتاری کے لئے اجازت طلب کرنا ہوتی ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ عوام کو گمراہ کیا جا رہا ہے کہ سینیٹ میں جو بل پیش کیے جا رہے ہیں، وہ ایف اے ٹی ایف سے منسلک نہیں یا ایف اے ٹی ایف کی ضرورت نہیں ہیں۔ ایسی کوئی شق نہیں ہے جو ایف اے ٹی ایف کے طے کردہ معیار پر پورا نہ اترتی ہو۔ ایک غیر ملکی کنسلٹنٹ کی رپورٹ اور ساتھ ہی ایف اے ٹی ایف کی رپورٹوں کی روشنی میں اس قانون سازی پر کام کیا گیا۔

وزیر قانون کا کہنا تھا کہ سینیٹ کی طرف سے ایف اے ٹی ایف سے متعلق دو بلوں کو مسترد کرنا بدقسمتی کی بات ہے اور اس بات کا امکان ہے کہ ان بلز کو پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں پیش کیا جائے گا۔

ڈاکٹر فروغ نسیم نے کہا کہ انہوں نے ایوان میں واضح طور پر وضاحت کی کہ قومی احتساب بیورو (نیب) اے ایم ایل اے کے مطابق ایک تفتیشی ایجنسی رہا ہے جو 2010ء میں نافذ کیا گیا تھا اور موجودہ حکومت کا اس سے کوئی لینا دینا نہیں تھا۔ اینٹی منی لانڈرنگ قانون سازی میں نیب کو تفتیشی ایجنسی کی حیثیت سے نہیں ہٹایا جا سکتا۔ انہوں نے مزید کہا کہ نیب قوانین میں ترمیم کے دروازے کھلے ہیں مگر اس بات کا خیال رکھا جائے گا کے اس سے احتساب کا عمل متاثر نہ ہو۔